گلشن معمار،تین ماہ سے سیوریج لائنیں بند،گندہ پانی جمع

1کراچی گلشن معمار میں گزشتہ 3ماہ سے سیوریج لائن بند ہونے کے باعث مرکزی داخلی دروازہ گیٹ نمبر 1 اور اطراف کا علاقہ گندے پانی کی زد میں ہے۔ جس کی وجہ سے مرکزی داخلہ سڑک ٹوٹ پھوٹ چکا ہے اور جگہ جگہ بڑے گڑھے پڑ چکے ہیں جو کسی بڑے حادثے کا سبب بن سکتے ہیں۔گلشن معمار کے گیٹ نمبر 1 سے بنگالی موڑ (اتوار بازار) تک پوری سڑک سیوریج کے پانی میں ڈوبی ہوئی ہے۔ 3ماہ کا عرصہ گزرنے جانے کے باوجود معمار انتظامیہ اس کا حل نکالنے میں ناکام ہے سیوریج کے پانی کے سبب اہل محلہ سخت اذیت میں مبتلا اور آمدورفت میں انتہائی مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ گلشن معمار کے مکینوں کے مطابق گیٹ نمبر 1 کا علاقہ اس سے قبل بھی سیوریج کے پانی میں ڈوب چکا ہے، تاہم اس مرتبہ تین ماہ گزر جانے کے باوجود انتظامیہ اس جانب توجہ نہیں دے رہی مکینوں کا کہنا ہے کہ معمار ہاؤسنگ اتھارٹی ہر ماہ مینٹی نینس کی مد میں رہائشیوں سے خطیر رقم وصول کرتی ہے،

 

2

تاہم اس کے باجود سیوریج اور صفائی کی صورت حال دن بہ دن خراب سے خراب تر ہوتی جا رہی ہے۔ اہل محلہ ٹاؤن ہال میں اس کی شکایات بھی کرواچکے ہیں اور اس سے قبل سوسائٹی کے مسائل حل کرنے کے لیے متعدد بار احتجاج بھی کرچکے ہیں، تاہم انتظامیہ نے اس پر مکمل خاموشی اختیار کر رکھی ہے۔ مکینوں کا دعویٰ ہے کہ معمار انتظامیہ جان بوجھ کر سوسائٹی کو کچرے کا ڈھیر بنانا چاہتی ہے، کیونکہ آبادی 70 فیصد تک پہنچنے پر سوسائٹی کا قبضہ کے ڈی اے کو منتقل ہوجائے گا، جس کے بعد معمار انتظامیہ سالانہ کروڑوں روپے کے مینٹی نینس چارجز سے محروم ہوجائے گی یہی وجہ ہے کہ سیوریج لائنوں، سڑکوں کے ٹوٹ پھوٹ، صفائی اور سیکورٹی کے مسائل پر توجہ نہیں دی جا رہی، جس کی وجہ سے سوسائٹی میں نئے خریدار آنے اور علاقے میں خریداری سے کترا رہے ہیں۔ مکینوں نے معمار کے مرکزی گیٹ پر سیوریج کا پانی اور اس کے نتیجے میں مرکزی داخلہ سڑک کی تباہی کو معمار انتظامیہ کی جانب سے آبادی روکنے کے منصوبے کا حصہ قرار دیا ہے۔

Top