سندھ حکومت کاسرکاری کالجوں کی فیس معاف کرنے پرغور

jam mahtab dahharکراچی سندھ حکومت سرکاری کالجوں میں داخلوں کی شرح میں اضافے کے لیے طلبا کو داخلہ اور امتحانی فیسوں کی چھوٹ دینے پر غور کررہی ہے۔نجی چینل کے مطابق کراچی میں اسکاؤٹ آڈیٹوریم میں ڈائریکٹر جنرل کالجز کی جانب سے کالجوں کے پرنسپلز کے لیے تربیتی ورکشاپ کے دوران خطاب کرتے ہوئے سندھ کے وزیر تعلیم جام مہتاب حسین ڈاہر نے ان خیالات کااظہار کیا۔ورکشاپ میں سیکریٹری تعلیم پرویز احمد سحر، ڈائریکٹرجنرل آف کالجز ڈاکٹر ناصر انصار اور سندھ بھر سے ریجنل ڈائریکٹرز آف کالجز اینڈ پرنسپلز نے بھی شرکت کی۔صوبائی وزیر نے کہا کہ اعداد وشمار کے مطابق تعلیم کا محکمہ ہر طالب علم پر تقریباً 16 ہزار روپے خرچ کررہا ہے لیکن تعلیمی سیکٹرپر ‘بڑی رقم’ خرچ کرنے کے باوجود ‘ہم مطلوبہ نتائج حاصل نہیں کررہے ہیں’۔امتحانات میں نقل کے رجحان پر بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ اس سے کسی بھی معاشرے کی بدنامی ہوتی ہے اور اس خراب تصویر کو مٹانے کے لیے اساتذہ، والدین اور طلبہ کو اپنا کردار ادا کرنا ہوگا۔وزیرتعلیم نے خبردار کیا کہ اگر کسی سینٹر سے نقل کی رپورٹ آئی تو اس کو بلیک لسٹ قرار دے کر اس طرح کی ذمہ داری دوبارہ کبھی بھی نہیں سونپی جائے گی۔جام مہتاب نے اساتذہ سے کہا کہ وہ طلبہ کو اپنے بچوں کی طرح سمجھیں اور جب تک ‘ہم ان کو اپنے بچوں کی طرح نہیں سمجھیں گے تو تعلیم میں ترقی نہیں ہوسکتی’۔ان کا کہنا تھا کہ تعلیمی معیار کی کمی سے معاشرے میں منفی سرگرمیوں میں اضافہ ہوا ہے۔انھوں نے اعتراف کیا کہ ‘ہم سب’ تعلیمی معیار کو گرانے کے ذمہ دار ہیں اور یہ غیراطمینان بخش بات کہ ہمارا تعلیمی معیاردیگر صوبوں کے مقابلے میں بہت پیچھے ہے۔صوبائی وزیر نے پرنسپلز کو خبردار کرتے ہوئے مزید کہا کہ نان ٹیچنگ اسٹاف کو امتحان میں نگرانی کی ذمہ داری نہ دیں جبکہ انھوں نے سیکریٹری تعلیم(کالجز) کو ہدایت دی کہ ان پرنسپلز کے خلاف کارروائی کریں جنھوں ورک شاپ میں شرکت نہیں کی۔

Top