سستی تفریح سے بھی محروم، پارک تباہ (انعم مشکور)

530b790ca63d2دیکھ بھال نہ ہونے کے باعث پارکس باغ ابن قاسم، بیچ پارک اور شہید بینظیر بھٹو پارک اجڑ گئے، عزیز بھٹی پارک کی گرل نشئی کاٹ کر لے گئے چھوٹے پارک کچرا کنڈی میں تبدیل، اطراف میں لوٹ مار کی جانے لگی، فیڈرل بی ایریا میں قائم تعلیمی باغ بھی گزرتے وقت کے ساتھ ساتھ اپنی قدر کھونے لگا۔
کراچی شہریوں کو بہتر ماحول کی فراہمی اور تفریح کے لیے بنائے گئے پارکس اب ہر گزرے دن کے ساتھ اپنی قدر کھو رہے ہیں جس کی وجہ سے شہریوں کے لیے تفریح گاہیں محدود ہو کر رہ گئی ہیں، کئی پارک حکومتی عدم دلچسپی کے باعث کھنڈرات میں تبدیل ہو کر ویران ہو گئے، تفصیلات کے مطابق شہر کے بڑے پارکس باغ ابن قاسم، بیچ پارک اور شہید بینظیر بھٹو پارک اپنی خوبصورتی کھو چکے ہیں، گھاس سوکھی ہوئی درخت مرجھائے ہوئے اور لائٹس زیادہ تر خراب ہونے کے باعث جانے والوں کو ویرانے کا منظر پیش کرتے ہیں، ان پارکوں میں نصب کیے جانے والے بینچ، واکنگ پاتھ، کینوپی اور دیگر اشیاء بھی بوسیدہ نظر آتی ہیں، خطیر رقم کی لاگت سے تیار ہونے والے یہ پارک اب خستہ حالت میں موجود ہیں۔

 

parques3ابن قاسم پارک میں نشئی اور جرائم پیشہ افراد نے ڈیرے ڈالے لیے ہیں۔ شہریوں کے مطابق روشنی کا انتظام نہ ہونے کے باعث بن قاسم پارک میں شام ڈھلے ہی لوٹ مار کی وارداتیں شروع ہو جاتی ہیں، دوسری جانب گلشن اقبال میں واقع عزیز بھٹی پارک کئی سال سے ویران پڑا ہے۔ پارک کے اطراف نالے اور کھلے گٹر نے پارک کی خوبصورتی ختم کر دی ہے۔ علاقہ مکینوں کے مطابق پارک میں نہ تو گھاس ہے نہ بجلی کا کوئی نظام۔ جس کی وجہ سے شام ڈھلے ہی پارک کے قریب سے گزرتے ہوے بھی خوف محسوس ہوتا ہے۔ دن کے اوقات میں نشئی افراد عزیز بھٹی پارک میں ڈیرے ڈال کر رکھتے ہیں، ذرائع کے مطابق گلشن اقبال میں واقع عزیز بھٹی پارک میں روزانہ کی بنیاد پر نشئی افراد رات میں گرل کاٹ کر لے جاتے ہیں جس کی وجہ سے اب پارک کی ایک جانب کی بائونڈری بھی ختم ہو گئی ہے۔ عزیز آباد، سمن آباد، دستگیر سمیت شریف آباد میں شہریوں کی تفریح کے لیے قائم کیے گئے پارکس انتظامیہ اور حکومتی لاپروائی کی بھینٹ چڑھ کر اپنی قدر کھو چکے ہیں۔ شہریوں کے مطابق ماضی میں یہ پارک شہریوں کو قدرتی ماحول فراہم کرنے کے ساتھ ساتھ تفریح بھی فراہم کرتے تھے، پارکوں میں آس پاس کے رہائشی افراد اور بچے شام کے اوقات میں جمع ہوتے تھے مگر اب کچرے کے ٖڈھیر کی وجہ سے ان پارکوں کی رونق ماند پڑگئی۔

 

نمائندے سے بات چیت کے دوران فیڈرل بی ایریا بلاک 16 کی خواتین نے بتایا کہ ان علاقوں میں قائم پارک میں انتظامیہ کی غفلت کے سبب جابجا گندگی کے انبار جمع رہنے لگے ہیں اور شام ڈھلے ہی لائٹنگ کا انتظام نہ ہونے کے سبب اندھیرا چھا جاتا ہے۔ گھاس بھی نہ ہونے کے برابر رہ گئی ہے۔ اب بچے پارکوں میں کھیلنے کے بجائے گلیوں میں کھیلنے کو ترجیح دیتے ہیں۔ دوسری جانب فیڈرل بی ایریا بلاک 14 میں قائم تعلیمی باغ بھی گزرتے وقت کے ساتھ ساتھ اپنی قدر کھو رہا ہے۔ ماضی میں بچوں کی تفریح کے لیے بنائی گئی کشتی رانی بھی اصل حالت میں موجود نہیں جبکہ تالاب میں موجود پانی نہ ہونے کے برابر رہ گیا ہے۔

Top