Sunday, October 25, 2020
Home کالم /فیچر کے الیکٹرک کی نااہلی (محمد اعظم عظیم اعظم)

کے الیکٹرک کی نااہلی (محمد اعظم عظیم اعظم)

جمعتہ الوداع کی صبح سواچھ بجے سے افطاری کے بعد تک روشنیوں کا شہرکراچی ایک بڑے بریک ڈاؤن کی وجہ سے بجلی سے محروم رہاایسا کراچی میں پانچ سال کے عرصے میں تیسری مرتبہ ہواہے کہ کراچی سمیت سندھ کے کئی شہراور علاقے بجلی کے کسی بڑے اور اذیت ناک بریک ڈاؤن سے گزرے ہیں اِس مرتبہ بھی کے الیکٹرک کی انتظامیہ نے سرتان کر اور سینہ پھولاکر اپنے معصوم و مظلوم صارفین کو اپنی کوتاہیوں پر پردہ ڈالنے کے خاطر اپنا وہی پرانا راگ گایاہے کہ آپ کی خدمت میں دن رات ایک کردینے اور آپ کے شہرِ کراچی کوروشن رکھنے والے ادارے کے الیکٹرک کو نیشنل گرڈٹرانسمیشن سسٹم سے ملنے والی 650میگاواٹ بجلی فنی خرابی کے باعث منقطع ہوگئی جس کے باعث کراچی میں بجلی کا نظام مکمل طور پر بیٹھ گیااور یوں کے الیکٹرک فوری طور پر اپنے پیداواری یونٹس کو بحال نہ کرسکاجس کی وجہ تمام شہرجمعے کی صبح سے شام تک بریک ڈاؤن کا شکاررہا۔

k electric

جبکہ اِس مرتبہ یہ ہواکہ ماہِ رمضان کے سب سے مبارک اور بابرکت والے روزیعنی کہ جمعتہ الوداع اور شبِ قدروالی رات کے موقع پر کے الیکٹرک کی وجہ سے شہر کراچی کوپانی کی سپلائی بندرہی ،اِس دوران روزے داروں اور مساجد میں اعتکاف میں بیٹھنے والوں کو پانی نہ ملنے کی وجہ سے جہاں پریشانی کا سامنارہاتو وہیںشہریوں نے کے الیکٹرک کی نااہل انتظامیہ کی وجہ سے شہر میں پانچ سال کے عرصے میں تیسری مرتبہ ہونے والے بڑے بریک ڈاؤن کو کے الیکٹرک کا اپنے صارفین کے ساتھ ایک ہولناک مشغلہ قراردیاہے تووہیںصارفین نے یہ بھی کہاہے کہ کے الیکٹرک کی انتظامیہ اِنہیں پاگل سمجھ کربجلی چوری کی مدمیں زائد بلنگ کی وصولی سے بھی بازنہیں آئے گی اور اِسے بھی صارفین ِبجلی نے کے الیکٹرک کی انتظامیہ کا ظلم قراردے کر کے الیکٹرک کی انتظامیہ پر شدیدغصے کا اظہارکرتے ہوئے کہاہے کہ عیدکے موقع پر شہرمیں بڑابریک ڈاؤن ہونے سے صنعتی اور تجارتی سرگرمیاںشدیدمتاثررہیںاوراِس طرح کے الیکٹرک کی نااہل انتظامیہ کی وجہ سے ایک دن میںاربوں کا نقصان ہوا،اِس موقع پر شہرِ کراچی کے صارفین ِ بجلی کا یہ بھی کہناتھاکہ اگرچہ 2010میں بھی جب اِسی قسم کا طویل بریک ڈاؤن ہواتھاتب بھی نیپرانے سابقہ کے ای ایس سی کی انتظامیہ کو متنبہ کرنے کے لئے 5لاکھ جرمانہ عائد کرتے ہوئے اِسے آئندہ ایسانہ ہونے اور اِس کی کارکردگی کو درست کرنے اوراپنی پیداواری صلاحیت کو بہتربنانے کابھی پابند کیا تھا مگراُس وقت کی کے ای ایس سی اور موجودہ کے الیکٹرک کی انتظامیہ نے پھر بھی کچھ نہ کیا اور نیپرا کے احکامات ہوامیں اُرادیئے آج یہ کے الیکٹرک کی نااہل انتظامیہ کی ڈہٹ پن کا ہی نتیجہ ہے کہ گزشتہ دِنوں شہرِ کراچی ایک مرتبہ پھر بڑے بریک ڈاؤن سے دو چارہوگیااور کراچی سمیت سندھ کے دوسرے شہر جن میں حیدرآباد،،بدین، ٹھٹھ، عمرکوٹ، دادواور اِسی طرح سندھ کے متعدداضلاع بھی شامل ہیں صبح سے شام تک بجلی سے محروم رہے،کیااِس کی ازالہ کے الیکٹرک کی انتظامیہ کرے گی یا پھر سینہ پھولاکراور گردن تان کااپنی یہ تاویل پیش کردے گی کہ جو ہواسوہواآئندہ کو شش کریں گے کہ ایسانہ ہومگرپھر ایساکچھ ہوگیاتو کے الیکٹرک کی انتظامیہ اپنی کارکردگی کو بہتربنانے کے بجائے پھریہی کرے گی جو یہ ابھی کررہی ہے۔

 load-sheding-in-ramdan

اگرچہ اِن دنوں نوازحکومت مُلک سے بجلی بحران کو جڑسے ختم کرنے کے لئے جہاں بہت سے تجربات کررہی ہے تو وہیںیہ اِس عمل پربھی کاربنددکھائی دیتی ہے کہ مُلک سے بجلی بحران کو جلدختم کرنے اور مُلک کو ترقی وخوشحالی اور مُلک کے ہر گھرکو روشن رکھنے کے خاطر جس قدرجلدممکن ہوسکے مُلک کے بجلی کے تمام قومی اداروں کی نج کاری کردی جائے تو اِس عمل سے بہت جلد مُلک کو بجلی بحران سے نجات دلائی جاسکتی ہے اور مُلک کو پلک جھپکتے ہی ترقی اور خوشحالی کی راہ پر ڈال کر مُلک کے شہرشہراور گاؤں گاؤں کے ہر گھر کو روشن رکھاجاسکتاہے ۔

بہرحال ..!اِس ضمن میں عرض یہ کرناہے کہ حکومت کو کے الیکٹرک سپلائی کارپوریشن کی موجودہ کارکردگی کو مدِ نظررکھتے ہوئے واپڈااور لیسکو سمیت دیگر اداروں کی نج کاری سے متعلق سوچناچاہئے کہ آج اگر مُلک کے دوسرے صُوبوں میںقائم بجلی سپلائی کرنے والے قومی ادارے بھی کے الیکٹرک کی طرح نجی تحویل میں چلے گئے تو پھر کیا اِن اداروں کی نجی انتظامیہ مُلک میں پیداواری صلاحیت رکھنے والی صنعتوں ، کارخانوں اور گھریلوصارفین کو باقاعدگی سے بجلی کی سپلائی جاری رکھ سکے گی…؟ یا کے الیکٹرک کی انتظامیہ کی طرح اپنی پیداواری صلاحیت اور ایک یونٹ بھی بجلی پیدانہ کرکے طویل لوڈشیڈنگ کے باوجودبھی اپنے صارفین کو ڈرادھمکاکر زائد بلنگ کی وصولی کا عمل جاری رکھ کر صرف پیسہ ہی کماتی رہے گی…؟اور مُلک کا جیساتیساچلتاہوانظام بھی بیٹھادی گی۔

Kesc

اَب کوئی یہ بات مانے یا نہ مانے مگر کراچی والوں کو سابقہ کے ای ایس سی اور موجودہ کے الیکٹرک سپلائی والوں کا شکرگزار ہوناچاہئے کہ اِس ادارے نے اِنہیں عذابِ قبرکے ابتدائی مراحل کے پہلے اور سب سے زیادہ خوفناک عذاب یعنی کہ عذابِ قبرکے اندھیروں کا توعادی بنادیاہے گزشتہ کئی سالوں سے عرس البلاداور روشنیوں کا شہرکہلانے والے شہرکراچی میں جس حساب سے اعلانیہ و غیراعلانیہ اور کثرت کے ساتھ فنی خرابی کی صورت میں جنتی بھی طویل مدتی لوڈشیڈنگ کی جاتی ہے یقینی طور پر اِس دوران جہاں اہلیان کراچی ذہنی و جسمانی اذیتیں جھیل رہے ہوتے ہیں تووہیںیہ گرمی اور قبرکے اندھیرے سے بھی زیادہ اندھیرا برداشت کرنے کے اچھی طرح سے عادی ہوچکے ہیں،اَب کوئی اہلیانِ کراچی کو شاید قبرکی گرمی اور اِس کے خُوفناک اندھیروںسے تو نہ ڈراسکے گا ،یہ کام بھی کے الیکٹرک والوں نے اپنے صارفین کی زندگی میں کرکے اپنا فریضہ اداکردیاہے اور اِس کے ساتھ ہی یہ عزم بھی ظاہر کیا ہے کہ جب تک یہ ادارہ نجی تحویل میںرہ کر جیساتیسااپناکام کرتارہے گایہ اپنی موجودہ کارکردگی سے مزیدبدترخدمات اپنے صارفین کے لئے آئندہ بھی انجام دیتارہے گا اور اپنی یہی کو شش جاری رکھے گاکہ اپنے صارفین کو دنیامیں ہی قبرکے اندھیروں اور دوسرے دردناک عذابوں کاعادی بنادے۔

ویسے تو آج اِس میں کوئی شک نہیں ہے کہ لوڈشیڈنگ کے عذاب کا سامناتو میرے مُلک کے دیگر صوبوں کے لوگوں کو بھی ہے مگرمُلک کے جس صوبے اور اِس کے جس شہر میں میراقیام ہے اِسے اِس شہرکی بدقسمتی کہہ لیں کہ جب سے اِس شہر کو روشن رکھنے والے ادارے کی نج کاری ہوئی ہے ،اور اِس ادارے پر نااہل اور کچھ نہ کرکے بھی پیشہ کماؤ انتظامیہ کاقبضہ ہواہے تب ہی سے شہرِکراچی کو اندھیروں میں ڈبونے کا عمل دن بدن شروع کردیاگیاہے،اور آج تو نوبت یہ ہوگئی ہے کہ روشنیوں کا شہرکہلانے والا ’’ میراشہرِ کراچی‘‘ زیادہ تر اندھیروںہی میں ڈوبارہتاہے، یہ بھی اِدارے کے الیکٹرک کا ہی بے مثال خدمت اور کمال ہے کہ اِس نے روشنیوں کے شہرکراچی سے یہ اعزاز بھی چھین لیا ہے۔

آج جن صاحب ثروت کے پاس دولت ہے اُن کے نزدیک کے الیکٹرک کے پیداکردہ اندھیروں کا بھی توڑ ہے اُنہوں نے اپنے گھروں ، بنگلوں اور اداروں کو روشن رکھنے کے لئے بڑے چھوٹے جنریٹرزاور یوپی ایس خریدلئے ہیں اور مجھ جیسے جن قلیل ماہوارآمدنی کمانے والے غریبوں اور ڈیلی اجرت والوں کے پاس یہ سہولیات میسر نہیں ہوتیں ہیں وہ ہی کماحقہ کے الیکٹرک کے اندھیروں اور موسمِ گرماکی آگ اُگلتی گرمی کا عذاب بھی برداشت کرتے ہیں،اور جب بات اِن کی برادشت کی حد سے تجاوزکرجاتی ہے تو پھر وہ اِدھراُدھر پھر کر دیکھتے ہیں کہ دوریا نزدیک کے کے الیکٹرک کے جن پولز میں بجلی موجودہوتی ہے تو یہی گرمی کے ستائے بیچارے غریب لوگ ’’ کے پی ایس‘‘ کنڈاپاورسپلائی /یعنی کہ حرفِ عام میں کنڈے کی سُہولت حاصل کرلیتے ہیں ،اِس طرح یہ اپنی پریشانی کا توڑ تونکال لیتے ہیں مگر کے الیکٹرک اور باقاعدگی سے بجلی کے بلز اداکرنے والے صارفین کے لئے بھی مشکلات پیداکردیتے ہیں،بسااوقات ’’ کے پی ایس ‘‘ کی سُہولت کے حصول کی کوششوں کے دوران کے الیکٹرک کے سلور کے لگے کمزورتاروں پر لوڈ بڑھ جاتاہے اور وہ یکدم سے بریک ہوجاتے ہیں اِس طرح جن علاقوں میں بجلی کی سپلائی جاری رہتی ہے وہ بھی اندھیرے میں ڈوب جاتے ہیں،اور اِس پر بھی کے الیکٹرک کی انتظامیہ کی چاندی ہوجاتی ہے،وہ اپنے صارفین کو بجلی نہ دے کر بھی بجلی چوری کا زائد بل بھیج دیتی ہے جِسے دیکھ کر صارف کو یہ گمان ہونے لگتاہے کہ یہ کے الیکٹرک کا ماہواربل ہے کہ بل کی صورت میں کے الیکٹرک کی بھتہ پرچی ہے ۔

load-sheding-ramdan

شہرکراچی کو بارباربڑے بریک ڈاؤن سے دوچارکرکے مُلکی معیشت کا ایک روزمیں اربوں کا نقصان کرنے اور مجموعی طور پر روزانہ اعلانیہ و غیراعلانیہ اور آئے روزکثرت سے فنی خرابی وتار ٹوٹنے اور وولٹیج کی کمی بیشی کی وجہ ہونے والی طویل لوڈشیڈنگ سے دوچارکرنے والے ادارے کے الیکٹرک کو حکومت اپنی تحویل میں لے کر اِس ادارے کی کارکردگی کو بہتربنائے تاکہ شہرکراچی میں بجلی کی سپلائی کا نظام بہترہو تووہیں بجلی کی چوری اورصارفین سے بلنگ کی وصولی کا سلسلہ بھی حوصلہ افزاحدتک ٹھیک ہوسکے گاجس سے یقینی طور پرکے الیکٹرک کی پیداواری صلاحیت میں بھی اضافہ ہوگاتووہیں شہرکراچی اپنے اُوپر چھائے اندھیروں سے بھی نجات حاصل کرکے ، کے الیکٹرک کی نااہلی انتظامیہ کی وجہ سے اپناکھویاہواروشینیوں کا شہرکہلانے والامقام بھی پھر سے حاصل کرلے گا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -

Most Popular

علی عمران کی گمشدگی، وزیراعظم کی ہدایت پر کمیٹی قائم

کراچی، وزیراعظم عمران خان نے جیو نیوز کے رپورٹر علی عمران سید کے لاپتہ ہونے کا نوٹس لیتے ہوئے جوائنٹ فیکٹ...

قائد اعظم ٹرافی ، 24 اکتوبر سے شروع ہوگی

کراچی، 24 اکتوبر سے قائد اعظم ٹرافی کا میلہ سجے گا۔ پی سی بی ذرائع کے مطابق قائد اعظم ٹرافی کی...

سندھ حکومت علی عمران کے لاپتہ ہونے کی تحقیقات کرے، فواد چوہدری

کراچی، وفاقی وزیر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے جیو نیوز کے رپورٹر علی عمران کے لاپتہ ہونے کی تحقیقات کےلئے سندھ...

جلد آٹا کی قیمت نیچے آجائیگی، کمشنر کراچی

کراچی، شہر کے انفرااسٹرکچر کی بہتری کے لئے بہت کام شروع ہوجائے گا، ان خیالات اظہار کمشنر کراچی سہیل راجپوت نے میڈیا...