Friday, October 30, 2020
Home خصوصی رپورٹس گلشن معمار میں پانی کی قلت (فاروق اعظم)

گلشن معمار میں پانی کی قلت (فاروق اعظم)

گلشن معمار کے رہائشی صاف پانی کو ترس گئے۔ مکین مہنگے داموں پانی کے ٹینکر خریدنے پر مجبور ہیں۔ پانی کی کمیابی کے باعث پارک، گرین بیلٹ اور گھروں کے باہر کیاریاں بھی خشک سالی کا شکار ہیں۔ پانی نہ ملنے کے سبب معمار کے رہائشی متعدد بار ٹائون ہال پر احتجاج بھی کرچکے ہیں۔ مکینوں کا کہنا ہے کہ مینٹی ننس بل ادا کرنے کے باوجود گھروں میں پانی کی فراہمی نہ ہونے کے برابر ہے۔ گلشن معمار میں اس سے قبل گھروں کے باہر پائپ لائنوں پر میٹر نصب تھے، میٹر ریڈنگ کے مطابق فی ہزار گیلن پر 100 روپے چارج ہوتے تھے۔ تاہم اب پلاٹ اور گھروں کے حساب سے مختلف فلیٹ ریٹ مقرر کر دیے گئے ہیں۔ 200 گز کے سنگل اسٹوری مکان سے پانی کی مد میں ماہانہ 187 روپے وصول کیے جاتے ہیں۔ رہائش پذیر افراد کا کہنا ہے میٹر سسٹم کے تحت پانی کی سپلائی کسی قدر بہتر تھی، لیکن فلیٹ ریٹ مقرر ہونے کے بعد فراہمی آب لائن میں پریشر کم ہونے کے ساتھ ساتھ پانی کی فراہمی بھی معطل ہوکر رہ گئی ہے۔ دوسری طرف معمار انتظامیہ پانی کے معاملے میں تعطل کی تمام تر ذمہ داری واٹر بورڈ پر عائد کرتی ہے۔

Chatri park 1
معمار انتظامیہ کا کہنا ہے کہ واٹر اینڈ سیوریج بورڈ نے پانی کی فراہمی میں ناغے کے نظام کو نافذ کیا ہوا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ واٹر بورڈ 24 گھنٹے کے لیے پانی فراہم کرتا ہے، جبکہ 48 گھنٹوں کے لیے پانی کی سپلائی بند رکھتا ہے۔ اس ناغے نظام کی وجہ سے گلشن معمار کو روزانہ کی بنیاد پر پانی سپلائی کرنا مشکل ہوگیا ہے۔ گلشن معمار 10 سیکٹروں میں تقسیم ہے اور ان سیکٹروں کو مزید 40 کے قریب سب سیکٹرز میں تقسیم کیا گیا ہے۔ معمار انتظامیہ ترتیب دیے گئے ٹائم کے مطابق تمام سیکٹرز کو پائپ لائنوں کے ذریعے پانی فراہم کرتا ہے۔ تاہم یہ دیکھنے میں آیا ہے کہ جو سیکٹر اونچائی پر واقع ہے یا جہاں آبادی زیادہ ہے، وہاں پانی کے حصول کے لیے مکینوں کو زیادہ پریشانی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ جس کے باعث معمار کے رہائشی گھریلوں استعمال کے لیے 2000 سے 2500 روپے میں واٹر ٹینکر ڈلوانے پر مجبور ہیں۔ رہائشی ایریا میں بڑی فیملی اور کرایہ داروں کے علاوہ فلیٹوں میں رہائش پذیر لوگ بھی سخت اذیت کا شکار ہیں۔ واضح رہے کہ گلشن معمار واٹر بورڈ کے بڑے بل صارفین میں سے ایک ہے، جس نے 6 مختلف سائز کے واٹر کنکشن لے رکھے ہیں۔ ان کنکشنز کا ماہانہ بل تقریباََ 50 لاکھ بنتا ہے۔ ہر ماہ معمار کے مکین باقاعدہ بل ادا کرتے ہیں لیکن اس کے باوجود بھی معمار انتظامیہ واٹر بورڈ کے 12کروڑ کی نا دہندہ ہے۔ گلشن معمار کے رہائشی پانی کی عدم دستیابی پر معمار انتظامیہ سے سخت نالاں ہیں۔

Chatri park 2
معمار کے رہائشی ضیاء الرحمن کا کہنا ہے کہ مینٹی ننس چارجز کی ادائیگی کے باوجود معمار انتظامیہ واٹر بورڈ کے کروڑوں کی نادہندہ ہے۔ واٹر بورڈ کی طرف سے پانی اسی لیے کم سپلائی ہو رہا ہے کہ معمار انتظامیہ باقاعدگی سے بل ادا نہیں کرتی۔ انہوں نے فلیٹ ریٹ پر بھی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ کہ پانی نہ ملنے کے سبب میٹر کے ذریعے زیادہ بل بننا مشکل تھا۔ اسی لیے معمار انتظامیہ نے فکس ریٹ مقرر کردیے ہیں، تاکہ بل مسلسل بنتا رہے۔ محمد سراج قریش نے کہا کہ معمار انتظامیہ کی لوٹ کھسوٹ کے بدولت معمار کے مکینوں کو پانی سمیت کئی پریشانیاں درپیش ہیں۔ مینٹی ننس بل دگنے کردیے گئے لیکن سہولیات ناپید ہیں۔ ان کا کہنا ہے یہاں کے مکین اب سیکشن پمپ کے ذریعے پانی کھینچنے پر مجبور ہیں، لیکن اس کے باوجود بھی انتہائی کم پانی حاصل ہوتا ہے۔ نوران شاہ نے بتایا کہ معمار میں پانی کی کمیابی کی وجہ سے پارکوں کے علاوہ گھروں کے سامنے کیاریاں بھی سوکھ گئی ہیں۔ اب روز مرہ ضروریات کے علاوہ پودوں اور درختوں کو پانی دینے سے پہلے سو بار سوچنا پڑتا ہے۔ معمار کے رہائشی محمد احمر نے کہا کہ معمار میں پانی کا بحران اس قدر شدت اختیار کرچکا ہے کہ پانی نہ ملنے پر مجبوراََ قریبی گوٹھ میں عزیز کے ہاں نہانے چلا جاتا ہوں۔

Chatri park 3
واضح رہے کہ معمار کے قریب نیو سبزی منڈی کے عقب میں واقع فقیرہ گوٹھ، پیر بخش بروہی گوٹھ، جہان آباد، دھنی بخش گوٹھ وغیرہ میں پانی کی کوئی کمی نہیں ہے۔ موٹر کے بغیر بالائی منزلوں پر بنے واٹر ٹینک تک پانی وافر مقدار میں پہنچ جاتا ہے۔ اس کی بڑی وجہ نادرن بائی پاس کے قریب واٹر بورڈ کا پمپنگ اسٹیشن ہے، جہاں سے شہر کو پانی سپلائی ہوتا ہے، زیر زمین بچھائی گئی بڑی لائنوں سے مذکورہ گوٹھوں کے مکینوں نے کنکشن لے رکھے ہیں۔ یہاں صاف پانی بڑی مقدار میں بہہ کر ضائع ہو رہا ہوتا ہے، جبکہ ٹینکر مالکان بھی پانی بھرنے کے لیے یہاں کا رخ کرتے ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -

Most Popular

کرونا کے بڑھتے کیسز، سندھ کے محکمہ داخلہ نے نئی گائیڈ لائنز جاری کردیں

کراچی: محکمہ داخلہ سندھ نے کرونا ایس او پیز سے متعلق نئی گائیڈ لائنز جاری کردیں۔ نیشنل کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر کی...

کراچی سمیت سندھ بھر میں موٹر سائیکل ڈبل سواری پر پابندی عائد کر دی گئی

کراچی: محکمہ داخلہ سندھ نے 12 ربیع الاول کے باعث کراچی سمیت سندھ بھر میں موٹر سائیکل کی ڈبل سواری پر پاپندی...

سندھ میں 12 ربیع الاول سے متعلق ضابطہ اخلاق جاری

کراچی: محکمہ داخلہ سندھ نے 12 ربیع الاول کے حوالے سے ضابطہ اخلاق جاری کردئیے، جس کا نوٹیفکیشن بھی جاری کردیا گیا...

کراچی میں 12 ربیع الاول کے جلوسوں سے متعلق ٹریفک پلان جاری

کراچی:ٹریفک پولیس کی جانب سے 12 ربیع الاول کے جلوسوں سے متعلق ٹریفک پلان جاری کردیا گیا، جس کے مطابق لی مارکیٹ،...