Wednesday, June 23, 2021
- Advertisment -

مقبول ترین

پی آئی اے کا کم ایندھن خرچ کروانے جہاز لیز پر لینے کا فیصلہ

پاکستان قومی ائیر لائن کا کم ایندھن خرچ کرنے والے مزید 4 جہاز لیز پر لینے کا فیصلہ، ترجمان پی آئی اے کے مطابق...

بیرون ملک جانے والوں کےلئے سندھ حکومت کا تحفہ

بیرون ملک جانے والوں کےلئے سندھ حکومت کا تحفہ، محکمہ صحت سندھ نے گیریز ویزا سروس سے ویکسی نیشن کےلئے معاہدہ کرلیا، معاہدے کے...

وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کا وزیراعلیٰ پنجاب کو فون، لاہور دھماکے پر گہرے دکھ کا اظہار

وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ کا وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کو فون، لاہور دھماکے میں جانی نقصان پر گہرے دکھ کا اظہار، ترجمان...

دنیا کے سب سے بڑے کارگو جہاز کی کراچی ائیر پورٹ پر لینڈنگ

دنیا کے سب سے بڑے کارگو ہوائی جہاز انتونوو این 225 ماریہ نے ایک بار پھر کراچی ائیرپورٹ پر لینڈنگ کی ہے، فلائٹ اے...

سندھ حکومت کا کورونا ہسپتالوں کو شمسی توانائی سے بجلی فراہم کرنے کا فیصلہ

سندھ حکومت کا کورونا وائرس سے نمنٹےکے لئےبڑا فیصلہ، حکومت نے صوبے کے  کورونا ایمرجنسی سینٹرز کو شمسی توانائی سےبجلی فراہم  کرنے کافیصلہ کر لیا۔ صوبائی وزیر برائے توانائی امتیاز شیخ کے مطابق یہ فیصلہ صوبے میں بجلی کی قلت اور کورونا بحران سے نکلنے کےلئے کیا گیا ہے۔ وزیر توانائی امتیاز احمد شیخ اور عالمی بینک کے افسران نے ویڈیو لنک کے ذریعے اجلاس کا انعقاد کیا، جس میں عالمی بینک کی معاونت سے سندھ میں جاری شمسی توانائی کے منصوبوں پر پیشرفت اور عملدرآمد کی رفتار کا جائزہ لیا گیا۔ اجلاس میں عالمی بینک کے سینئر انرجی اسپیشلسٹ اولیور نائٹ،عالمی بینک کے انجم احمد، ماہاارشد اور دیگر افسران کے علاوہ سیکریٹری توانائی سندھ طارق علی شاہ، پراجیکٹ ڈائریکٹر محکمہ توانائی قاضی محفوظ اور دیگر افسران موجود تھے۔ اس موقع پر وزیر  توانائی سندھ امتیاز شیخ نے ضلع جامشورو میں 560 میگا واٹ اور گھارو کے ضلع ٹھٹہ میں 330 میگاواٹ کے دو سولر پارک بنانے کی ضرورت پر زور دیا۔ اُن کا کہنا تھا کہ ان پارکوں کی تعمیر سے بجلی کی شدید قلت اور بحران پر قابو  پانا ممکن ہوگا۔ امتیاز شیخ نے عالمی بینک کے افسران کو بتایا کہ سندھ حکومت نے پہلے مرحلے میں مختلف ہسپتالوں میں قائم کرونا ایمرجنسی سینٹرز کو شمسی توانائی کے ذریعے بجلی فراہم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ سندھ حکومت صوبے کے 29 اسپتالوں کو شمسی بجلی پر چلانے کے لئے 1.2 ارب روپے لاگت کے منصوبے پر مارچ 2021 تک کام مکمل کر لے گی۔