Thursday, December 3, 2020
- Advertisment -

مقبول ترین

ضلع وسطی کے مزید علاقوں میں اسمارٹ لاک ڈاؤن

کورونا وائرس کے بڑھتے کیسز کے پیش نظر کراچی ضلع وسطی کے مزید علاقوں میں اسمارٹ لاک ڈاؤن نافذ، لاک ڈاؤن والے علاقوں میں...

اسٹاک ایکسچینج میں کاروبار کا مثبت آغاز

 پاکستان اسٹاک ایکسچینج میں کاروبار کا مثبت آغاز، اسٹاک ایکسچینج میں 377 پوائنٹس کا اضافہ، 100 انڈیکس کی 337 پوائنٹس کے اضافے سے 42...

النور سوسائٹی میں صحافی کو لوٹ لیا گیا

تھانہ سمن آباد کی حدود النور سوسائٹی بلاک 19 میں ڈکیتی کی واردات، صبح سویرے نیوز ون ٹی وی کے نیوز پروڈیوسر اور پی...

شہر قائد میں پولٹری کی قیمتیں بے قابو

شہر قائد میں پولٹری کی قیمتیں بےقابو، مرغی کا گوشت 380 سے 400 روپے فی کلو اور زندہ مرغی 250 روپے میں فروخت ہورہی...

جے یوآئی رہنما راشد سومرو کی اہلکار محمد بخش کے گھر آمد

کراچی جمعیت علماء اسلام صوبہ سندھ کے سیکرٹری جنرل مولانا راشد محمود سومرو نے جے یو آئی کے اعلی سطحی وفد کے ہمراہ کشمور میں معصوم بچی اور خاتون سے زیادتی کے درندہ صفت ملزمان کو گرفتار کرنے والے ایس ایس آئی کے گھر جاکر انہیں مبارکباد دی اور اجرک پہنایا۔ اس موقع پر علامہ راشد محمود سومرو نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ میں صرف جمعیت علماء اسلام کے کارکنان کی جانب سے نہیں بلکہ پورے سندھ کی جانب سے کشمور آکر اپنے بھائی کو اس دلیری پر مبارکباد پیش کرنے آیا ہوں ، انہوں نے کہا کہ پولیس آفیسر نے غیرت مند والد اور عظیم سندھی سپوت کا کردار ادا کیا ہے، انہوں نے کہا کہ اپنی بیٹی کی زندگی اور عزت داؤ پر لگانا کوئی معمولی بات نہیں، انہوں قربانی کیلئے خود کو تیار کیا اور سفاک مجرموں کو قانون کے شکنجے تک پہنچایا، پورے سندھ کو ایس آئی محمد بخش پر کو فخر ہے، علامہ راشد محمود سومرو نے کہا کہ اگر ایسے فرض شناس جوان پولیس فورس میں موجود رہیں گے تو ان شاءاللہ العزیز آئندہ کسی درندے کو معصوموں بچیوں اور عزت دار ماماؤں کو ہاتھ لگانا تو دور کی بات میلی آنکھ سے دیکھنے بھی جرات نہیں ہو گی، انہوں نے کہا کہ اس واقعے پر پورے سندھ میں سوگ کا سماں ہے ہر دل زخمی ہے ، بھیانک واقعے پر بیٹیوں کے والدین خون کے آنسو روئے ہیں ، درندہ صفت ملزمان کو منطقی انجام تک پہنچانے پر پوری سندھ پولیس اور خصوصا ایس ایس پی سکھر امجد شیخ کو مبارکباد پیش کرتے ہیں، انہوں نے کہا کہ ایسے انسانیت سوز واقعات کی فوری روک تھام ہونی چاہئے ، اور ذمہ داران کو کیفر کردار تک پہنچنا چاہئے تاکہ قوم کی مائیں اور بیٹیاں محفوظ ہوسکیں، اگر عدالتیں بروقت فیصلے صادر کرتیں تو مجرموں میں خوف ہوتا ، میں پچھلے 6 سال شہید والد علامہ ڈاکٹر خالد محمود سومرو شہید کے کیس کی پیشیاں بھگت رہاہوں اگر عدالتیں تاریخ پر تاریخ دیتی رہیں گی تو لوگ قانون ہاتھ میں لینے کی کوشش کریں گے۔ عدالتوں کو فوری انصاف کی فراہمی یقینی بنانی ہوگی تاکہ ان جرائم کا راستہ روکا جاسکے ۔

Open chat