Wednesday, October 28, 2020
Home اسلام جانوروں سے حسن سلوک( ایم اے تبسم )

جانوروں سے حسن سلوک( ایم اے تبسم )

islam1اسلام دین رحمت ہے، اس کی رحمت انسان کی حد تک محدود نہیں ہے، بلکہ ہر ذی روح پر محیط ہے۔ اس کے ابر کرم نے جہاں عالم انسانیت کو سیر اب کیا ہے، وہیں بے زبان جانوروں کو بھی اپنی رحمت بے کراں سے مالا مال فرمایا۔ اتنا ہی نہیں بلکہ جانوروں کے ساتھ حسن سلوک پر اجر وثواب کی خوشخبری بھی سنائی گئی۔ ایک صحابی رسول اکرمﷺ سے دریافت کرتے ہیں کہ میں نے بطور خاص اپنے اونٹوں کے لیے ایک حوض بنا رکھا ہے، اس پر بسا اوقات بھولے بھٹکے جانور بھی آجاتے ہیں، اگر میں انہیں بھی سیراب کردوں تو کیا اس پر بھی مجھے ثواب ملے گا ؟آپ ﷺنے فرمایا : ”(ہاں ) ہر پیاسے یا ذی روح کے ساتھ حسن سلوک کرنے سے ثواب ملتا ہے“۔ (سنن ابن ماجہ، حدیث:3686) اسلام نے جانوروں کو بھی چین سے جینے کا حق دیاہے۔اس کی اصولی تعلیم یہ ہے کہ نہ خود تکلیف اٹھاﺅ اور نہ ہی دوسروں کو تکلیف پہنچاﺅ: ”لا ضرر ولا ضرار“ (ابن ماجہ :340) دوسروں کو تکلیف دینا چاہے وہ جانور ہی کیوں نہ ہواسلام کے نزدیک درست نہیں ہے۔ حضرت ربیع بن مسعودؓ فرماتے ہیں کہ ایک سفرمیں ہم رسول اللہﷺکے ساتھ تھے۔ آپ اپنی حاجت کے لیے باہر تشریف لے گئے۔ ہم نے ایک سرخ پرندہ دیکھا جس کے ساتھ اس کے دوبچے بھی تھے۔ ہم نے ان بچوں کوپکڑ لیا، تو وہ فرط غم سے ان کے گرد منڈلانے لگا۔ اتنے میں نبی کریمﷺ تشریف لائے توآپ نے فرمایا :اس پرندے سے اس کے بچوں کو چھین کر کس نے اسے رنج پہنچایا ؟ اس کے بچوں کو لوٹادو،اس کے بچوں کو لوٹادو“۔ (ابوداﺅد:2675)۔بعض روایتوں سے یہ بھی معلوم ہو تا ہے کہ جو جانور انسانوں کے لیے فائدہ پہنچاتا ہے اس کی قدر کی جانی چاہیے۔جانوروں کے ساتھ حسن سلوک اور انصاف پسندی کا تقاضا ہے کہ اللہ تعالیٰ نے جس جانور کو جس مقصد کے لیے پیدا کیا ہے اس سے وہی کا م لیا جائے ، اس سے ہٹ کر اگر کو ئی شخص اس سے دوسرا کام لیتا ہے تو یہ اس کے ساتھ زیادتی ہے۔ مثلاً: اللہ نے بیل کو کھیتی باڑی کے لیے پیدا کیا ہے۔ اگر کوئی اس سے گدھے کی طرح بوجھ ڈھونے کا کام لیتا ہے تو اسلام کے نزدیک یہ ظلم ہے۔ ایک مرتبہ رسول اکر مﷺ نے فرمایا :”اپنے جانوروں کی پیٹھ کومنبر نہ بناﺅ(یعنی جانورسے اسٹیج کا کام نہ لو)، اللہ نے انہیں تمہارا فرمانبردار صرف اس لیے بنا یا ہے کہ وہ تم کو ایسے مقامات پر آسانی سے پہنچادیں جہاں تم بڑی مشقت سے پہنچ سکتے تھے۔ تمہارے لیے اللہ نے زمین کو پیداکیا ہے، اپنی ضرورتیں اس سے پوری کرو“۔ (ابوداﺅد:2567) جن جانوروں سے خدمت لی جاتی ہے، یا جن سے فائدہ اٹھا یا جاتا ہے، ان کے تعلق سے اسلام کی یہ تعلیم ہے کہ ان کے آرام وراحت کا پوراپورا خیال رکھا جائے، انہیں بر وقت کھلا یا پلا یاجائے۔ اگر وہ بیمار ہوں تو ان کا علاج معالجہ کر ایا جائے، ان سے تکلیف کی حالت میں کام نہ لیا جائے، ان کے رہنے سہنے کا مناسب بندوبست کیا جائے اور ان سے اتنا ہی کام لیا جائے جس کے وہ متحمل ہو ں، ان سے اس وقت تک کام لینا جب تک کہ وہ بری طرح تھک کرآگے کام کرنے کے لائق نہ رہ جائیں، یا ان کی حالت قابل رحم ہونے کے باوجود مارمار کر ان سے کا م لینا ، یا انہیں بھو کا پیاسا رکھ کر کام لینا یہ سراسر ظلم ہے۔ ایک اور موقع پرآپ ﷺ نے ایک اونٹ کو دیکھا جس کی پیٹھ اس کے پیٹ سے لگی ہوئی تھی۔آپ نے فرمایا”ان بے زبان جانور وں کے معاملے میں اللہ سے خوف کھاﺅان پر ایسی حالت میں سواری کر و جب کہ یہ اس کے قابل اور صحت مند ہوں اور انہیں اچھی حالت ہی میں (تھک کر چور ہونے سے پہلے ) چھوڑو“۔ جس طرح اپنے ماتحت انسانوںکو بھوکا پیاسا رکھنا گنا ہ ہے، اسی طریقے سے جانوروں کو بھوکا پیاسا رکھنا گنا ہ ہے اور یہ سنگ دلی اسے جہنم تک پہنچا سکتی ہے، جیساکہ حضرت عبد اللہ بن عمر ؓ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺنے فرمایا ”ایک عورت ایک بلی کی وجہ سے جہنم میں ڈالی گئی، اس نے اسے باندھ رکھا تھا۔ نہ تو اس نے اسے کچھ کھانے کو دیا اور نہ اسے آزاد کیا کہ وہ (چل پھر کر) حشرات الارض میںسے کچھ کھالیتی“۔ چہر ہ جسم کا نہایت لطیف اور حساس مقام ہے۔ اس عضو کو پہنچنے والی معمولی اذیت بھی بے حد تکلیف دہ ہوتی ہے۔ اہل عرب چوپایوںکے چہروںپر داغ لگاتے تھے اور بسا اوقات چہروں پر مار بھی دیا کرتے تھے۔ اللہ کے رسول ﷺنے اس سنگ دلی کو دیکھا تو سختی سے روکا۔ (ابوداﺅد:2564) حضرت جابرؓ فرماتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺنے چہرے پر مارنے اور اسے داغ دینے سے سختی کے ساتھ منع فرمایا۔ (مسلم:5551) حضرت عبد اللہ بن عباسؓ سے روایت ہے کہ نبی کریم ﷺ کا گزر ایک دفعہ ایک گدھی کے پاس سے ہوا، جس کے چہرے کو داغا گیا تھا۔آپ نے دیکھا تو فرمایا: اس شخص پر اللہ کی لعنت ہو جس نے اسے داغا ہے“۔ (مسلم:5552) ایک دفعہ آپ ﷺصحابہ کے ساتھ کسی سفر کے پڑاﺅ میں تھے۔آپ ضرورت سے کہیں تشریف لے گئے تھے، جب واپس آئے تو دیکھا کہ ایک صاحب نے اپنا چولہا ایسی جگہ جلایا ہے جہاں زمین میں چیونٹیوں کا بل تھا۔ یہ دیکھ کر آپ نے پوچھا ’ یہ چو لہا یہاںکس نے جلایا ہے‘۔ ان صاحب نے کہا: یا رسول اللہ! میںنے!آ پ نے فرمایا ’اسے بجھاﺅ، اسے بجھاﺅ‘ (ابوداﺅد:2675) (غرض یہ تھی کہ ان چیونٹیوں کو تکلیف نہ ہو اور کہیںوہ جل نہ جائیں)۔ عربوں کا ایک دلچسپ مشغلہ تھا کہ وہ جانوروں کوآپس میں لڑاتے اور اس تماشے سے لطف اندوز ہوتے تھے۔ ا س میں جانور گھائل اور زخمی ہوکر بے حد تکلیف اٹھاتے تھے۔ رسول اللہ ﷺنے اس درندگی کو دیکھا تو سختی کے ساتھ اس سے روکا ہے۔ (ابوداﺅد:2562 ) اسلام میں جانوروں کے حقوق کے سلسلے میں یہ واضح تعلیمات تھیں، جن سے یہ حقیقت واضح ہوگئی کہ اسلام نے جانوروں کو کس قدر ہمدردی کی نگاہ سے دیکھا ہے۔ بقول مولانا سید سلیمان ندویؓ: ”ان تعلیمات سے اندازہ لگا یا جاسکتا ہے کہ اسلام کے سینہ میں جو دل ہے وہ کتنا نرم اور کس قدر رحم وکرم سے بھر اہواہے“۔ دنیا کو سب سے پہلے ”حقوق حیوان“ سے آشنا کرنے والا ”اسلام“ ہی تھا، ورنہ اس سے پہلے ”حقوق حیواں“ کا تصور دنیا میں نہیں تھا۔ ہو بھی کیسے سکتاتھا؟ جس دنیا میں”حقوق انسان“ ہی کے لالے پڑے ہوں وہاں ”حقوق حیوان “کا تصور ناممکن ہی تو تھا۔ ان حالات میں ضرورت اس بات کی ہے کہ اسلام کے نام لیوا اسلام کی پاکیزہ تعلیمات کو دنیا کے روبرو پیش کر یں اور اس کا بے داغ اور صاف وشفاف آئینہ دنیا کے سامنے رکھ دیں، کہ دنیا اس کی امن پسند تعلیمات کا مشاہدہ کرسکے۔
matabassum81@gmail.com

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -

Most Popular

سرجانی ٹائون سے لاپتہ 8 سالہ عروہ بازیاب

کراچی، پیر کے روز سرجانی ٹائون سیکٹر ڈی فور میں گھر کے باہر سے لاپتہ ہونےوالی 8 سالہ عروہ فہیم بازیاب، پولیس...

بدھ اور جمعہ کو سی این جی اسٹیشنز بند رہیں گے

کراچی، سندھ بھر کے سی این جی اسٹیشنز بدھ اور جمعہ کو بند رہیں گے، ذرائع کے مطابق بدھ اور جمعہ کو...

لیاقت آباد، سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کی ٹیم پر حملہ

کراچی، سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کی ٹیم پر لیاقت آباد میں حملہ، ذرائع ایس بی سی اے کے مطابق لیاقت آباد...

گزری، نجی بینک میں آتشزدگی،فائر بریگیڈ کی گاڑیاں روانہ

کراچی، گذری میں نجی بینک میں آتشزدگی، کنٹونمنٹ بورڈ کی گاڑیاں آگ پر قابو پانے کےلئے روانہ، ذرائع کے مطابق بینک میں...