Tuesday, October 27, 2020
Home خاص خبریں مذہبی و سیاسی جماعتیں ٹکراﺅ و مفادات کےلئے سندھ کو داﺅ پر نہ لگایا جائے، اے...

ٹکراﺅ و مفادات کےلئے سندھ کو داﺅ پر نہ لگایا جائے، اے پی سی

APCکراچی، جے یو پی کے زیر اہتما م آل پارٹی کانفرنس کا اہتمام کیا گیا جس میں سیاسی ٹکراو اور ذاتی اور پارٹی مفادات اور عالمی ایجنڈا کیلیئے سندھ اور ملک کو داو پر نہ لگایا جائے۔ کانفرنس مطالبہ کرتی ہے کہ بارش اور سیلاب متاثرین کی بھرپور مدد کی جائے اور نااہلی، اقربا پروری اورجرائم میں ملوث افراد کو گرفتار کرکے سخت سزائیں دی جائیں۔ ملک میں اس وقت ٹکراﺅ کی صورتحال پیدا کرنے سے گریز کیا جائے۔ عوام کومہنگائی، بدامنی، دہشت گردی، لاقانونیت سے نجات دلانے کی ضرورت ہے، حکمران فوری طور پر دھاندلیوں میں ملوث لوگوں کے خلاف کارروائی کریں۔ مکمل صوبائی خودمختاری یقینی بنائی جائے، نئے آزاد اور خودمختیار الیکشن کمیشن کے زیر انتظام بلدیاتی انتخابات کرائے جائیں اور کرپشن کا خاتمہ کیا جائے۔

علامہ شاہ احمد نورانی کے گھر ’بیت الرضوان ‘میں بعنوان ’انتظامی صوبے اور سندھ کی تقسیم کا مطالبہ ، سندھ، ملک ، جمہوریت اور امن کے خلاف سازش‘ہونے والی آل پارٹی کانفرنس کی صدارت قومی عوامی تحریک کے مرکزی صدر اور نامور قانون دان ایاز لطیف پلیجو اورجے یوپی کے مرکزی رہنماءمولانا اویس احمد نورانی کی صدارت میں منعقد ہوئی ، جس میں سندھ اسمبلی کے اپوزیشن لیڈر شہر یار مہر، پاکستان پیپلز پارٹی کے سینیٹر سعید غنی، پاکستان مسلم لیگ نواز سندھ کے صدر اسماعیل راہو، عوامی اتحاد پارٹی کے صدر اور سابق وزیراعلی لیاقت جتوئی، سابق وزیراعلی ارباب غلام رحیم، تحریک انصاف سندھ کے صدر نادر اکمل لغاری، ناز بلوچ، جمیعت العلماءاسلام سندھ کے صدر ڈاکٹر خالد محمود سومرو، جماعت اسلامی کراچی کے سابق امیر محمد حسین محنتی، عوامی نیشنل پارٹی سندھ کے جنرل سیکریٹری یونس خان بنسری، ایم پی اے امیر نواب، بلوچ رہنماءمنظور گچکی، پاکستان مسلم لیگ فنکشنل کی ایم پی اے مہتاب اکبر راشدی، پاکستان مسلم لیگ نواز کے ایم پی اے عرفان اللہ مروت، نیشنل پارٹی کے رہنماءڈاکٹر عبدلحئی بلوچ، سندھ اسمبلی کی سابق ڈپٹی اسپیکر راحیلہ ٹوانہ، سنی تحریک کے رہنمامحمد فہیم، نواز لیگ ایم پی اے شفیع محمد جاموٹ، بلوچستان نیشنل پارٹی مینگل گروپ کے عبدالروف مینگل، سندھ ترقی پسند پارٹی کے خیر محمد مگسی،اداکار گلاب چانڈیو، ڈاکٹر شفقت عباسی اور دیگر سیاسی و سماجی رہنماوں نے بڑی تعداد میں شرکت کی ۔

آل پارٹیز کانفرنس میں رہنماوں نے متفقہ طور پر قرارداد منظور کی کہ ملک کی موجودہ صورتحال میں سندھ اور پاکستان کو تقسیم کرنے اور 20 صوبے بنانے کا مطالبہ سندھ کے ساتھ پاکستان کے 18کروڑ عوام کے زخموں پر نمک پاشی کرنے کے مترادف ہے، اور اس مطالبہ سے سندھ میں ترقی یا ہم آہنگی کے بجائے انتشار کو ہوا ملے گی اور عالمی طاقتوں کی ہدایت پر لسانی تضادات بڑھانے کی وجہ سے نہ ختم ہونے والے ٹکراو اور فسادات کا اندیشہ ہے،لہذہ یہ کانفرنس سندھ سمیت پورے پاکستان میں انتظامی صوبوں کے نام پر پاکستان کوکمزور کرنے، نفرتیں بڑھانے اور انتشار پھیلانے کو رد کرتی ہے۔ سندھ میں بسنے والے سندھ اور ملک کے تمام بیٹے اور بیٹیاں محبت ، جمہوریت ، ترقی اور امن چاہتے ہیں اور سندھ اور پاکستان کی تقسیم نہیں چاہتے ۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -

Most Popular

اے وی ایل سی کی کارروائی، موٹرسائیکلیں چھننے والے گروہ کے 5 کارندے گرفتار

کراچی:اینٹی وائلنس لفٹنگ سیل (اے وی ایل سی) نے موٹرسائیکلیں چھیننے والے گروہ کے 5 ملزمان گرفتار کرلئے ، ذرائع اے وی...

گساخانہ خاکے، کراچی بار کی بدھ کو ہڑتال کا اعلان

کراچی ، فرانس میں گستاخانہ خاکوں کی اشاعت کامعاملہ کراچی بارایسوسی ایشن نے بروزبدھ عدالتوں میں ہڑتال کااعلان کردیا کل سٹی...

اختر کالونی، پسند کی شادی کرنےوالے نوجوان پر حملہ

کراچی، اختر کالونی میں پسند کی شادی کرنے نوجوان کا جرم بن گیا، نامعلوم افراد نے نور نامی نوجوان کو فائرنگ کرکے...

تنخواہوں کی عدم ادائیگی، ڈاکٹرز کا کے ایم سی آفس پر مظاہرہ

کراچی، شہری حکومت کے زیر انتظام اسپتالوں کے ڈاکٹرز نے سات ماہ سے تنخواہیں نہ ملنے کےخلاف کے ایم سی آفس...