Sunday, October 25, 2020
Home Uncategorized 27دسمبر ، بینظیر چلی گئیں مگر مناظر نہ بھولے(تصاویر)

27دسمبر ، بینظیر چلی گئیں مگر مناظر نہ بھولے(تصاویر)

تحریر: سید اقبال چشتی
تصاویر: مانیٹرنگ ڈیسک
benazir-death-pic-16کلاس جاری تھی کہ آفس بوائے اکرام بھاگتا ہوا کلاس میں دا خل ہوا اور اپنی پھولی ہوئی بے قابو ہوتی سانسوں کو کنٹرول کرتے ہوئے کہنے لگا ’’سر بے نظیر بھٹو قتل کردی گئی ہیں‘ انسٹی ٹیوٹ بند ہوگیا ہے‘ سب گھر جائیں۔‘‘
benazir-death-pic-07باہر نکلے تو قیامت کا منظر تھا۔۔۔ ہر طرف افراتفری مچی ہوئی تھی۔۔۔ کسی کو کسی کی پروا نہیں تھی۔۔۔ ہرطرف اندھیرا اور سڑکوں سے ٹرانسپورٹ غائب۔ دس کلو میٹر کا فاصلہ پیدل طے کر کے گھر پہنچے۔۔۔ تمام راستے تباہی اور لوٹ مار کے مناظر نے قیامِ پاکستان کا وہ منظر‘ جو اپنے بزرگوں سے سنا تھا‘ سا منے آگیا۔

benazir-death-pic-15قیامِ پاکستان کے اعلان کے بعد ہندؤوں اور سکھوں کے ہا تھوں مسلمانوں کی املاک‘ جان و مال‘ عزت آبرو کو اس قدر نقصان نہیں پہنچا ہوگا جس قدر قیام پاکستان کے بعد پاکستان کے حکمرانوں اور گھوسٹ لٹیروں سے پہنچا ہے۔

benazir-death-pic-11قائد اعظم نے یہ کہہ کر کی تھی کہ ’’میری جیب میں جتنے سکے ہیں سب کھوٹے ہیں۔ قیام پاکستان کے بعد ان کھوٹے سکوں نے پاکستان پر قبضہ کر لیا اور آج تک ان کرپٹ اور کرپشن کے شہنشاہوں کی حکمرانی قائم ہے۔۔۔ ہم بس یہ کہہ سکتے ہیں کہ ’’قائد ہم شرمندہ ہیں۔۔۔‘‘
’’benazirمحترمہ! ہم شرمندہ ہیں‘ تیرے قاتل زندہ ہیں‘‘ یہ نعرہ بے نظیر بھٹو کی پہلی برسی پر لگایا گیا اور ہر سال لگتا رہا اور شاید اس بار بھی لگے۔ 27 دسمبر 2007 کو بے نظیر بھٹو کے قتل کے بعد جو کچھ ہوا‘ وہ قیامِ پاکستان کے اعلان کے بعد ہجرت کرکے آنے والے مہاجرین کے ساتھ بھی نہیں ہوا تھا‘ جو اس ملک کے حکمرانوں اور نامعلوم لٹیروں نے مملکتِ خداد پاکستان میں رہنے والوں کے ساتھ کیا۔ راولپنڈی میں ایک ہجوم کے سامنے بے نظیر بھٹو کو قتل کیا گیا لیکن اتنے بڑے ہجوم نے ملک کی املاک کو اتنا نقصان نہیں پہنچایا جتنا سندھ میں کراچی سے لے کر کشمور تک لوٹ مار کی گئی اور املاک کو نقصان پہنچایا گیا جس کی نظیر نہیں ملتی۔
benazir-death-pic-17جس مجمع کے سامنے بے نظیر بھٹو کو قتل کیا گیا وہ پر سکون رہتا ہے لیکن پہلے سے تباہ حال سندھ کو نامعلوم گھوسٹ لٹیروں نے مزید تباہ کر دیا۔ ایسی کون سی پس پردہ قو تیں ہیں جو شر پسندوں کو اپنے مقاصد کے لیے استعمال کرتی ہیں اور مقاصد میں کامیاب بھی ہوجاتی ہیں۔ انہیں خفیہ ہاتھوں نے اِدھر بے نظیر بھٹو کے قتل کی خبر آنے کے بعد پورے سندھ میں لوٹ مار کا بازار گرم کر دیا۔ کرا چی میں آگ لگا دی گئی‘ سپر ہا ئی وے اور نیشنل ہا ئی وے پر اندرون سندھ اور اندرون ملک جا نے والے مال و اسباب سے لدے ٹرالروں کو لوٹنے کے بعد لائن سے آگ لگا دی گئی جس طرح 12 مئی کو لائن سے کھڑی گاڑیوں کو آگ لگا دی گئی تھی۔
benazir-death-pic-14
لوگ پیٹرول ختم ہو نے کے باعث اپنی گاڑیوں کو نیپا کے پل اور دیگر جگہوں پر کھڑی کر کے پیدل گھر کی طرف چلے گئے تھے لیکن جب گاڑیوں کے مالکان دوسرے دن واپس گا ڑی لینے آئے تو تمام گا ڑیاں جلا دی گئی تھیں نہ صرف ٹرکوں اورگا ڑیوں پر ہا تھ صاف کیا گیا بلکہ بینکوں میں لگی ATM مشینوں کو بھی لو ٹ لیا گیا۔ اگر یہاں تک غم اور غصہ نکال لیا جاتا تو غنیمت تھا لیکن ان شرپسندوں کے آگے پوری انتظامیہ مفلوج نظر آئی جس کا نتیجہ یہ نکلا کہ ریلوے کا پورا نظام 27 دسمبر کے دن تباہ کر دیا گیا۔
benazir-death-pic-12کراچی سمیت اندرون سندھ ریلوے کے تمام سگنلز توڑ دیے گئے جن کو بحال کرنے میں کئی سال لگ گئے۔ کیا یہ سب پہلے سے طے شدہ منصو بے کے تحت کیا گیا؟ ایسا لگتا تھا جیسے 12 مئی کو دہشت گرد اور شر پسند عناصر آزاد تھے‘ ان کو کو ئی پوچھنے والا نہیں تھا بالکل اسی طرح چند گھنٹوں میں لاڑکانہ سمیت پورے سندھ کو آگ لگا کر تباہ کرنے والے شر پسند آزادانہ کارروائیاں کر تے رہے اور حکومتی انتظامیہ پولیس ایسے غائب تھی جیسے گدھے کے سر سے سینگ یہ سب کچھ جنرل مشرف کے دور میں ہوا لیکن بعد میں اقتدار میں آنے والی پیپلز پارٹی نے اس ہنگامہ آرائی کے حوالے سے تحقیقات کیوں نہیں کرائی؟
benazir-death-pic-09کون لوگ تھے جنھوں نے سندھ کو تباہ کر نے اور نفرتوں کو ہوا دینے کی کوشش کی۔۔۔ ’’چاروں صوبوں کی زنجیر‘‘ کہلانے والی بے نظیر کے قتل کا وا قعہ پنجاب میں ہوا لیکن سندھ میں اس کی شدت نظر آئی‘ کیا پارٹی کے کارکنان دیگر صوبوں میں نہیں تھے؟ یقیناًپورے ملک میں پارٹی کارکنان ہیں لیکن جو یہ کہتے ہیں کہ ’’مجھے بے نظیر کے قاتلوں کا پتا ہے‘‘ اُن کو سندھ میں ہنگامہ آرائی کرانے والوں کا بھی پتا ہے اس لیے آج تک نہ بے نظیر کے قاتلوں کے نام سامنے آئے اور نہ ہی شر پسند عناصر کے کیونکہ ظاہر یہی ہوتا ہے کہ قتل سے لے کر ہنگامۂ آرائی تک سب پہلے سے طے شدہ منصوبہ تھا جس طرح باقاعدہ ایک منصو بے کے تحت 70 کلفٹن کے حدود میں ہائی پروفائل شخصیت وزیراعظم کے بھائی کو قتل کر دیا گیا اور اس واقعہ کو ’’پولیس مقابلے‘‘ کا رنگ دیا گیا‘ آخر ایسا کیا ہوتا ہے کہ پو لیس وزیراعظم کے بھائی پر فائرنگ کا حکم دے دیتی ہے لیکن پورے سندھ کو آگ اور خون میں نہلانے نے والوں کے خلاف کوئی انتظامی افسر فائرنگ تو کیا کسی قسم کی کارروائی کا حکم نہیں دیتا۔
27 benazir-death-pic-08دسمبر کو سیکورٹی کا دور دور تک نام و نشان نہیں تھا۔ سیکورٹی ادارے کہاں تھے اور کارروائی کے لیے کس کی ہدایت کے منتظر تھے‘ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ جب بات اُوپر تک جا تی ہوئی نظر آتی ہو تو کون اس قسم کے واقعات پر نوٹس لے حکمرانوں کا ہر معاملے میں ’’مٹی پاؤ‘‘ کا اصول شر پسند عناصر کو مزید قوت فراہم کرتا ہے۔ جرائم کے خلاف اقدامات اور تحقیقات میں سستی کی وجہ سے اس بات کی کوئی گارنٹی نہیں ہے کہ آئندہ ایسا نہیں ہوگا۔ اس کی مثال جب تین دن کے بعد کراچی شہر کی رونق بحال ہو ئی تو ایم کیو ایم کے رہنما فاروق ستار کے قتل کی افواہ نے پھر پورا کرا چی بند کر دیا تھا۔
benazir-death-pic-022007میں جو حکمران تھے آج امن اور سکون کے ساتھ زندگی گزار رہے ہیں‘ سا نحہ 12 مئی 2007 کے ذمے دار اُس وقت سندھ کے وزیر داخلہ وسیم اختر اب مئیر کراچی ہیں اور جنرل مشرف جن کا کہنا کہ ان کا پاکستان سے باہر جا نا ایک جنرل ہی کی مہربانی کی وجہ سے ممکن ہوا‘ کتاب لکھنے کا ارادہ رکھتے ہیں‘ بہتر ہوگا کہ وہ اپنی کتاب میں ان واقعات پر بھی روشنی ڈالیں کہ کس نے کس کے کہنے پر معصوم جانوں اور املاک کو نقصان پہنچایا؟ جنرل مشرف اور زرداری کی پا رٹی نے اسلام مخا لف اقدامات کی کوششیں کیں جس کی و جہ سے دونوں اپنے ہی ملک میں آنے سے قاصر ہیں اور دو نوں ہی جانتے ہیں کہ بے نظیر کے قاتل کو ن ہیں۔
benazir-death-pic-04زرداری صاحب بے نظیر کی بر سی پر پاکستان آنے کا ارادہ رکھتے ہیں لیکن ان کے قدر دان ان کو مشورہ دے رہے ہیں کہ وہ پاکستان میں تین چار دن سے زیادہ قیام نہ کریں کہیں ایسا نہ ہو کہ ’’بے نظیر ہم شرمندہ ہیں‘‘ کے بعد کل آپ کی پا رٹی پھر کہہ رہی ہو ’’زرداری ہم شر مندہ ہیں۔۔

 

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -

Most Popular

علی عمران کی گمشدگی، وزیراعظم کی ہدایت پر کمیٹی قائم

کراچی، وزیراعظم عمران خان نے جیو نیوز کے رپورٹر علی عمران سید کے لاپتہ ہونے کا نوٹس لیتے ہوئے جوائنٹ فیکٹ...

قائد اعظم ٹرافی ، 24 اکتوبر سے شروع ہوگی

کراچی، 24 اکتوبر سے قائد اعظم ٹرافی کا میلہ سجے گا۔ پی سی بی ذرائع کے مطابق قائد اعظم ٹرافی کی...

سندھ حکومت علی عمران کے لاپتہ ہونے کی تحقیقات کرے، فواد چوہدری

کراچی، وفاقی وزیر سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چوہدری نے جیو نیوز کے رپورٹر علی عمران کے لاپتہ ہونے کی تحقیقات کےلئے سندھ...

جلد آٹا کی قیمت نیچے آجائیگی، کمشنر کراچی

کراچی، شہر کے انفرااسٹرکچر کی بہتری کے لئے بہت کام شروع ہوجائے گا، ان خیالات اظہار کمشنر کراچی سہیل راجپوت نے میڈیا...