دعوت کا سب سے بڑا ذریعہ قرآن پاک ہے، زاہدالرشدی

dawadaکراچی ریجنل دعوۃ سینٹر کراچی میں دعوۃ اکیڈمی بین الاقوامی اسلامی یو نیورسٹی اسلام آبادکے زیر اہتمام بہ سلسلہ ٔ خطبات دعوت خصوصی نشست کا اہتمام کیا گیا۔ ’’کارِ دعوت اور داعی کا کردار‘‘ کے موضوع پر خصوصی نشست سے نامور عالم دین اور الشریعہ اکیڈمی گوجرانوالہ کے ڈائریکٹر مولانا زاہدالراشدی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ دعوت دین کے حوالے سے مختلف پہلو ہیں، مگر دعوت کے داخلی اور خارجی مشکلات کو مدنظر رکھا جائے۔ داعی کو آسمان کی طرح بلند، پہاڑ کی طرح استقامت اور زمین کی طرح عاجزی والی صفات سے مزین ہونا چاہیے۔ مدارس میں دعوت و ارشاد پر تخصص نہیں بلکہ دعوت کو نصاب کا حصہ بنانا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ ہماری تمام تر کمزوریوں اور نااہلیوں کے باوجود دعوت کا سب سے بڑا ذریعہ قرآن پاک ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ عالمی سطح پر دعوت دین کے مقابلے میں صرف مسیحی دعوت ہے، کیوں کہ مسیحی مشنری نیٹ ورک کے طور پر کام کررہے ہیں اور مسیحیت کی دعوت کو دنیا میں پھیلارہے ہیں، جب کہ اسلام کا ان کے مقابلے میں کوئی موثر نیٹ ورک موجود نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ دور میں دعوت کو پوری نسل نو تک پہنچانا ہماری ذمے داری ہے، کیوںکہ انبیاء کا یہ کام امت مسلمہ کو ہی کرنا ہے۔ مولانا زاہد الراشدی نے کہا کہ ہم لوگوں کو اسلام میں داخل کرکے مسلکی اختلافات میں ڈال کر کنفیوز کردیتے ہیں، جس کی وجہ سے نو مسلم پریشان رہتے ہیں، اس لیے ضرورت اس امر کی ہے کہ ہمیں اسلام کی دعوت دینی چاہیے۔ اس سے قبل انچارج ریجنل دعوۃ سینٹر (سندھ) کراچی ڈاکٹر سید عزیزالرحمن نے افتتاحی گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ہماری روایت ہے کہ ہم اہل علم کی کراچی آمد کے موقع پر علمی و فکری نشستوں کا اہتمام کرتے ہیں، آج کی نشست بھی اسی سلسلے کی کڑی ہے۔ انہوں نے کہا کہ دعوت دین کے حوالے سے داعی کا کردار بنیادی اہمیت کا حامل ہے اور دعوت کے مختلف پہلوئوں سے روشناس ہونا ہر داعی کی ذمے داری ہے۔ نشست میں مختلف جامعات اور مدارس کے اساتذہ، فضلا، طلبہ اور زندگی کے مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے افراد نے شریک کی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Top