Wednesday, October 28, 2020
Home کالم /فیچر سقوطِ مشرقی پاکستان (سجاد خان جدون)

سقوطِ مشرقی پاکستان (سجاد خان جدون)

 Surrender_1971برصغیر کی منتشر تاریخ میں سقوط مشرقی پاکستان ایک اہم سنگ میل کی حیثیت رکھتا ہے یہ سانحہ حالات واقعات کے تناظر میں کئی دلخراش یادیں سمیٹے ہوئے ہے جنہیں یکسر فراموش کردینا ناممکن ہے ۔ اگر یہ معاملہ بنگالی قوم کے حقوق تک ہی محدود رہتا تو شایداتنی گھمبیر صورت حال اختیار نہ کرتا لیکن یہ سلسلہ اچانک بغاوت میں تبدیل ہوگیا جو بعد ازاں ملک توڑنے کی سازش پر اختتام پذیر ہواجو کسی محب وطن کے لیے ڈراﺅنے خواب سے کم نہیں۔ ےہ درست ہے کہ قوموں کی زندگی بسا اوقات ایسے دوراہے پر آ کھڑی ہوتی ہے جب درست فیصلے کرنا مشکل ہوجاتا ہے۔ ایسے نازک حالات میںمخلص قیادت ہی ملک وقوم کو بحرانوں سے نکالنے میں مدد فراہم کرتی ہے جو قائد اعظم کی صورت میںہمیں میسر تھی لیکن افسوس کہ ان کے انتقال کے بعد ہم ہمیشہ کے لیے ایسی خصوصیت سے محروم ہوگئے اور نا اہل قیادت کا ایک نہ ختم ہونے والا سلسلہ ہم پر مسلط ہوگیا جس کی پاداش میںپے درپے حوادث ہمارا مقدر ٹھہرے ۔
قیام پاکستان کے تقریباً چوبیس سال بعد ملک دولخت ہوگیالیکن ہم نے تاریخ سے سبق سیکھنے کے بجائے باقی ماندہ وطن کو بھی جوکھوں میں ڈال رکھا ہے۔سقوط ڈھاکہ ایک ایسے سانپ کی مانند ہے جو 43سال قبل انتہائی سرعت سے گذر چکا ہے لیکن لکیر پیٹنے کا عمل آج تک جاری ہے اس دن کی مناسبت سے پاکستان ، انڈیا اور بنگلہ دیش میں بحث ومباحثوںکا انعقاد کیا جاتا ہے، اخبارات خصوصی مضامین سے مزین ضمیمے چھاپتے ہیں جن میں حقائق کے منافی بحث ہوتی ہے جس سے کوئی خاص مقصد حاصل ہونے کے بجائے تعصب کی آگ کو مزید ہوا ملتی ہے۔ جہاں تک مشرقی پاکستان کا تعلق ہے اسے ایک منظم سازش کے تحت بنگلہ اسٹیٹ بنانے کا منصوبہ برسوں پہلے تیار ہوچکا تھااسے عملی جامہ پہنانے کے لیے1969کے آخری دنوں میں بغاوت کا باقائدہ آغاز ہوا جس کا مقصد مشرقی حصے میں مغربی پاکستان کی رٹ کو چیلنج کرنا تھا۔ یہ پرتشدد واقعات مارچ 1971تک اس نہج پر پہنچ گئے کہ انہیں کچلنے کے لیے طاقت کا استعمال ناگزیر ہوگیاےہ وہ وقت تھا جب شیخ مجیب مشرقی پاکستان کی آزادی کا اعلان کر چکے تھے او ر 23مارچ جسے قرارداد پاکستان کے حوالے سے خاص اہمیت حاصل ہے اس دن ڈھاکہ شہر میں بنگلہ دیش کے پرچم لہرائے گئے جن میں مجیب الرحمٰن کا گھر بھی شامل تھااسی دن ریڈیو اور ٹی وی سے بنگالی شاعر ٹیگور کا نغمہ ’سنار بنگلہ ‘ قومی ترانہ کے طور پر نشرکیا گیا۔لہٰذا 25 مارچ کو عوامی لیگ کے سرکردہ رہنماﺅں کی گرفتاری اور شرپسند عناصرکی سرکوبی کے لیے فوجی حکمت عملی کا آغاز ہوا جسے ’آپریشن سرچ لائٹ ‘ کا نام دیا گیاجو کسی حد تک کامیابیوں ،ناکامیوں، سازشوں اور فنی خامیوں کے ملے جلے تاثر کے بعد16 دسمبر 1971کو اس وقت انجام پزیر ہواجب جنرل امیر عبداللہ خان نیازی نے اپنے بھارتی ہم منصب، کمانڈرلیفٹیننٹ جنرل جگجیت سنگھ اروڑہ کے سامنے ایک تقریب میں ہتھیار ڈالے اور سقوط ڈھاکہ کی دستاویز پر دستخط کئے۔
1958میں ملک پر پہلا ایوبی مارشل لاءنازل ہوااور جب اےوب خان 11سالہ اقتدار کے بعد رخصت ہونے لگے تو ملک کی باگ ڈورفوج کے سربراہ جنرل آغامحمد یحییٰ خان کے حوالے کر گئے اس طرح قوم پر ایک اور مارشل لاءمسلط کردیا گیاجس سے جمہوریت اور ادارے مضبوط ہونے کے بجائے ملک میں انارکی پھیل گئی جسے طاقت کے ذریعے دبانے کی کوشش میںعوامی سطح پر لسانیت اور عدم تحفظ کااحساس بیدار ہواجس سے قوم پرستوں نے خوب فائدہ اٹھاےاجس کی ایک مثال عوامی لیگ کے رہنما عطاءالرحمٰن کی وہ تقریر ہے جو انہوں نے مشرقی پاکستان کی قانون سازاسمبلی میں کی ”مسلم لیگ کا حکمراں ٹولہ مشرقی بنگال کی ثقافت اس کی زبان اور اس کے لٹریچرکو تحقیر آمیز نگاہو سے دیکھتا ہے۔ برابر کا شہری تو درکنارہمیں محکوم قوم اور خود کو فاتح سمجھا جاتا ہے“ فوجی حکمرانوں کے خلاف ایسے زہر آلود بیانات کا نتیجہ یہ نکلا کہ بنگالی قوم کابچہ بچہ بغیر سوچے سمجھے متحدہ پاکستان سے نفرت کرنے لگااورنفرتوں کی یہ خلیج اتنی وسیع ہوئی کہ بنگالیوں کو جو بھی غیر بنگالی نظر آیا اسکی تذلیل کو انہوں نے اپنا اولین فرض سمجھا، ان کے مال واسباب کو مال غنیمت سمجھ کر لوٹاگیا، ہزاروں افراد کوسنگینوں میں پرودیا گیااور خواتین کی عزتوں کو گلیوں ، بازاروں میں پامال کیا گیا۔ ظلم وجبر کا یہ گھناﺅنا سلسلہ بھارت کی سرپرستی میں تقریباً 2سال تک بلا تعطل جاری رہا لیکن اس بربریت اور وحشی پن پرنہ اقوام متحدہ اپنی روائتی بے حسی سے باہر آیااور نہ دوسروں کے معاملات میں بے جا مداخلت کرنے والے امریکہ بہادر نے کسی طرز عمل کامظاہرہ کیا اس موقع پر عالمی میڈےا نے بھی سچ کو سچ لکھنے کے بجائے اپنی جانبداری کو برقرار رکھاانہوں نے کلکتہ میں بیٹھ کر سیاحوںسے سنے سنائے مفروضوںاور انڈین آرمی کی جھوٹی اطلاعات کو بنیاد بنا کر اپنی رپورٹس مرتب کیں جن میں پاکستان کی افواج کو بدناکرنے کا تمام سامان موجود تھاجس سے دنیا بھر میں فوج کی ان پیشہ وارانہ ذمہ داریوںکو نقصان پہنچا جو انہوں نے انڈیا کی تربیت یافتہ مکتی باہنی کی بغاوت اور دہشت پسندانہ کاروائیوں کوکچلنے کے لیے سرانجام دیں لیکن بھارت کا وہ مکروہ کردار کھل کر دنیاکے سامنے نہ آسکاجو اس نے ایک آزاد اور خود مختار ریاست کے اندر موجود غداروں کو مالی اورفوجی امداد فراہم کرنے کے لیے تخلیق کیا تھا ۔ یہاں جماعت اسلامی بنگلہ دیش اور اسکے رہنماﺅں کا ذکر نہ کرنا بھی ناانصافی کے برابر ہو گا جنہوں نے متحدہ پاکستان کے تصور اور افواج پاکستان سے یکجہتی کے لیے اس وقت آواز بلند کی جب تمام سیاسی جماعتیں سکڑ کر لسانیت کے نعرے بلند کرنے لگی تھیں انہیں پاکستان کی سا لمیت اور فوج کے وقارسے زیادہ اقتدار کے لالچ نے اپنے پنجوں میں جکڑ رکھا تھا اس وقت اگر انڈیا اور مکتی باہنی کے خلاف کوئی سیاسی آواز گونجتی تھی تو وہ تھی جماعت اسلامی، اسی لیے چار دہائیاں گذرجانے کے باوجود جماعت کے رہنماﺅں کوپڑوسی ملک کے ایماء پر ریاستی دہشت گردی کا نشانہ بنایا جا رہا ہے لیکن افسوس آج ان کے لیے آواز بلند کرنے والا کوئی نہیں جو کل تک وفادار اور اب غدار کہلائے جارہے ہیں۔ ایک بار پھر وہی تاریخ بلوچستان اور ملک کے دیگر حصوں میں دوہرائی جارہی ہے اور اب تک کی تحقیقات سے یہ بات سامنے آچکی ہے کہ پاکستان میں ہونے والی حا لیہ بدامنی کے پیچھے انڈیا کاسو فیصد ہاتھ ہے جو دوبارہ کچھ غداروں پر مشتمل ایک نئی مکتی باہنی ترتیب دینے میں مصروف ہے لیکن ہمارے حکمراںکے کیا کہنے ہیں وہ بھارت سے دوستی کے خواب دیکھنے میں اتنے محو ہیں کے انہیں ملک میں بڑھتی ہوئی شورش اور بے چینی کے پیچھے چھپے دشمن کے ہاتھ نظر ہی نہیں آتے۔

 sk.jadoon.pak@gmail.com

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -

Most Popular

تمام شہری گھر سے باہر نکلنے پر ماسک کے استعمال کو یقینی بنائیں( این سی او سی)

کراچی:: نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر نے گھروں سے باہر نکلنے پر ماسک کا استعمال لازمی قرار دے دیا۔ این سی او...

توہین رسالت،جماعت اسلامی کا کل کراچی میں احتجاج کا اعلان

فرانس میں گستاخانہ خاکوں کے خلاف جماعت اسلامی کا کراچی میں کل احتجاج کا اعلان، جماعت اسلامی کراچی کے امیر حافظ نعیم...

اسٹیل ٹاون، پولیس کی بڑی کارروائی مختلف وارداتوں میں ملوث 2 ملزمان گرفتار

کراچی: اسٹیل ٹاون پولیس کی بڑی کارروائی، مختلف وارداتوں میں ملوث 2 ملزمان گرفتار، پولیس کے مطابق گرفتار ملزمان شہری سے لوٹ...

پاک بحریہ کا اینٹی شپ میزائلز فائرنگ کا کامیاب مظاہرہ،ہمہ وقت تیار ہیں،نیول چیف

پاک بحریہ کا اینٹی شپ میزائلز فائرنگ کا کامیاب مظاہرہ،پاک بحریہ نے شمالی بحیرہ عرب میں سطح سمندر اور ہوا سے اینٹی...