Thursday, October 22, 2020
Home خصوصی رپورٹس کراچی میں اسموگ کا خدشہ (ثناء سیف)

کراچی میں اسموگ کا خدشہ (ثناء سیف)

1کراچی میں موسم گرما کی طرح سمندری ہوائیں رکنے کے باعث سردی میں اسموگ کا خدشہ ہے، آلودہ ہوائیں شہر کوخطرے کی جانب دھکیل رہی ہیں تاحال کراچی میں اسموگ کا خدشہ نہیں اگر 3 سے 4 گھنٹے سمندری ہوائیں تواتر سے چلیں تو ہوائیں فضائی آلودگی کو صاف کر دیتی ہیں، اس کے برعکس موسم گرما کی طرح سمندری ہوائیں کچھ دن رک جائیں تو شہر میں بھی اسموگ کا خدشہ ہے۔
اس بات کا انکشاف محکمہ موسمیات کے سابق چیف میٹرولوجسٹ توصیف عالم اور ماہرین ماحولیات نے کیا، ایک سروے کے دوران انھوں نے بتایا کہ کراچی میں سمندری ہوائیں رک جانے سے اسموگ کا خدشہ ہے جس طرح گزشتہ سال موسم گرما میں سمندری ہوائیں رک جانے کے باعث کراچی میں گرمی کی لہر (ہیٹ ویو ) آئی تھی اور درجہ حرارت 49 ڈگری تک جا پہنچا تھا جس سے 2 ہزار سے زائد افراد جاں بحق ہو گئے تھے اسی طرح موسم سرما میں سمندری ہوائیں رک جانے یا ہواؤں کا رخ تبدیل ہو جانے کی صورت میں اسموگ کا خطرہ ہے۔
4
عالمی ادارہ صحت کی رپورٹ کے مطابق دنیا بھر میں 20 سر فہرست آلودہ ترین شہروں میں پاکستان کے 3 شہروں میں پانچویں نمبر پر کراچی ہے جبکہ چھٹے نمبر پر پشاور اور ساتویں نمبر پر راولپنڈی شہر شامل ہے بھارت کا شہر دہلی پہلے نمبر پر ہے، گزشتہ دنوں لاہور اور وسطی پنجاب کے متعدد شہر اسموگ یا آلودہ دھند کی لپیٹ میں رہے اور بھارت کے شہر دہلی بھی تاریخ کی بدترین فضائی آلودگی کا شکار رہا ،امریکی خلائی ادارے ناسا کے مطابق بھارتی پنجاب میں کسانوں کی جانب سے جلائی جانے والی فصلوں کی باقیات اور گھاس پھوس نذر آتش کرنے سے کثیف دھواں فضا میں جاتا ہے جو سرد موسم میں منجمد ہو کر گاڑھے دھوئیں یا اسموگ کا باعث بنتا ہے جس سے پاکستان و بھارت کے دونوں اطراف زہریلی دھند میں اضافہ ہوتا ہے۔
2
تاہم ماہرین ماحولیات کا کہنا ہے کہ اسموگ کا سبب صرف بھارت نہیں بلکہ پاکستان میں بھی زرعی فضلات کو جلایا گیا ہے اس کے علاوہ ہواؤں کا رخ تبدیل ہونے سے بھی لاہور سمیت دیگر شہروں میں اسموگ رہا، پاکستان میں اسموگ بطور ایک نئی اصطلاح استعمال کی جا رہی ہے جو Fog( دھند) اورsmock( دھواں) کا مجموعی لفظ ہے، ماہر ماحولیات کے مطابق موسم سرما میں درجہ حرارت کی شدت کم ہو جاتی ہے اور فضا میں 80 فیصد رطوبت بڑھ جاتی ہے، عموماً سرد علاقوں میں صبح کے وقت دھند رہتی ہے اور جیسے جیسے فضا میں نمی کا تناسب کم ہو جاتا ہے تو دھند بھی کم ہوتی جاتی ہے۔
اسموگ میں سلفر ڈائی آکسائیڈ، نائٹروجن آکسائیڈ کاربن ڈائی آکسائیڈ، میتھین اور دیگر ذرات شامل ہوتے ہیں، اسموگ کے موسم میں بلا ضرورت گھر سے باہر نکلنے سے گریز کیا جائے اور گھر سے باہر جانے سے قبل چشمہ اور ماسک لگانا ضروری ہے، پانی زیادہ پئیں، گھروں کی کھڑکیاں اور دروازے مضبوطی سے بند رکھیں، ٹھنڈے پانی سے آنکھوں کو دھوئیں، اسموگ سے آنکھوں میں سوزش، گلے کی خراش، شدید کھانسی اور دمے و الرجی کے مریض بالخصوص بچے شدید متاثر ہوتے ہیں، چین میں ہر سال17 فیصد اموات اسموگ کی وجہ سے ہوتی ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -

Most Popular

سندھ حکومت اور پولیس ڈرامہ کررہی ہے، شبلی فراز

کراچی، وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات شبلی فراز نے ایک بار پھر سندھ پولیس کی چھٹیوں کی درخواست کو ڈارمہ قرار دے...

کراچی، مسکن چورنگی پر دھماکے کے زخمیوں کے علاج کے معاملے محکمہ صحت سندھ نے نجی اسپتال کو خط لکھ کر آگا...

کراچی میں جھڑپوں کی جھوٹی خبر،بھارتی میڈیا دنیا بھر میں رسوا

کراچی ،بھارتی میڈیا نے پاکستان کے خلاف جھوٹے پروپیگنڈے کے اپنے ہی ریکارڈز توڑ دیے۔ بھارتی میڈیا اپنی اِس احمقانہ خواہش کو خبر...

کورونا وائرس، حکومت کا کئی شعبوں کی بندش پر غور

کراچی، نیشنل کمانڈ آپریشن سینٹر کا اجلاس وفاقی وزیر اسد عمر کے زیر صدارت ہوا جس میں فیصلہ کیا گیا کہ جس...