اقبال ترے دیس کا کیا حال سنائیں (محمد سمیع)

dr iqbalہمارے کارٹونسٹ بعض اوقات غضب کا کارٹون بناتے ہیں جو ذہن سے جاکر اس طرح چپک جاتے  ہیں کہ نکلتے ہی نہیں خواہ آپ اسے لاکھ بھولنے کی کوشش کریں۔کافی عرصے پہلے میں نے ایک کارٹون دیکھا تھا جسے میں اب تک نہیں بھولا۔ اس میں آسمان پر علامہ اقبال کی وہ مشہور تصویر پیش کی گئی تھی جس میں وہ اپنے رخسار پر ہاتھ رکھ کر غور وفکر میں مصروف نظر آتے ہیں۔ ظالم کارٹونسٹ نے وہی تصویر کی بھرمار اپنے اس کارٹون میں زمین پر کردی تھی۔ میں اس کارٹون میں یہ پیغام مضمر سمجھا تھا کہ جس طرح آسمان پر علامہ اقبال فکرمند نظر آرہے ہیں اسی طرح پاکستان کے سارے اقبال یعنی عوام زمین میں فکرمند دکھائی دے رہے ہیں۔ آسمان پر کا تو پتہ نہیں کہ وہاں علامہ اقبال پاکستان کے بارے میں اپنی موت کے بعد فکرمند ہیں یا نہیں البتہ زمین پر تو اس میں کوئی شک نہیں کہ ہر درد مند پاکستانی پاکستان کے استحکام اور اس کی سالمیت کے بارے میں فکرمند ہے اور ہونا بھی چاہئے۔مذکورہ کارٹون کو پانامہ لیکس کے ہنگاموں میں دیکھیں تو واقعی آج کل عوام کا وہی حال ہے جو اس کارٹون میں دکھایا گیا تھا۔
علامہ اقبال کو لوگ ویژنری کہتے ہیں اور یقینا جب ہم ان کا یہ قول پڑھتے ہیں کہ ہندوستان کے شمال مغرب میں ایک اسلامی ریاست کا قیام تقدیر مبرم ہے تو ان کے ویژن کو تسلیم کرنا پڑتا ہے۔ انہوں نے تو ہندوستان کے صرف شمال مغرب میں اسلامی ریاست کے قیام کو تقدیر مبرم قرار دیا تھا ، اللہ تعالیٰ نے ہم پر احسان عظیم یہ کیا کہ نہ صرف ہندوستان کے شمال مغربی علاقے بلکہ مشرقی علاقے پر مشتمل ملک عطا فرمادیا اور اسی لیے بجا طور پر اسے مملکت خداداد پاکستان کہتے ہیں۔

مشہور مفکر قرآن ڈاکٹر اسرار احمد ؒ کا تجزیہ یہ تھا کہ پاکستان کے قیام میں ہندوو¿ں کی بالادستی کا خوف تھا لیکن یہ کوئی ایسا عنصر نہیں تھا جو برصغیر ہند کے تمام مسلمانوں کو متحد کردیتا ۔ان کا کہنا یہ تھا کہ تحریک پاکستان میں جان اس وقت پڑی جب اس میں علامہ اقبال نے اسلام کا انجکشن لگایا۔ اس کے بعد بقول ان کے بانی پاکستان محمد علی جناح دس سال تک اسلام کی قوالی گاتے رہے جس کے نتیجے میں مسلمانان ہند وجد میں آگئے اور معجزانہ طور پر پاکستان دنیا کے نقشے پر وجود میں آگیا۔ آج ہمارے ملک کا سیکولر طبقہ اس ملک کو اسلامی ریاست تسلیم کرنے کے لیے تیار نہیں بلکہ اسے سیکولر ریاست قرار دینے کے لیے اپنی ناکام کوششیں جاری رکھے ہوئے ہے او ر اس حد تک آگے نکل گیا ہے کہ وہ قائد اعظم کو بھی سیکولر قرار دینے پر بضد ہے۔ وہ تو اللہ کا شکر ہے کہ اس طبقے کو ابھی اس کی جرا ءت نہیں ہوئی کہ وہ علامہ اقبال کو یا ان کے فکر کو سیکولر قرار دے سکے۔

میں نے اوپر لکھا ہے کہ علامہ اقبال ایک وژنری شخصیت تھی اور صرف عالم اسلام ہی نہیں ،دنیا بھی انہیں وژنری تسلیم کرتی ہے۔اس وژنری شخصیت نے پاکستان کا خواب دیکھا تھا لیکن اگر ہم غور کریں تو اس نتیجے میں پہنچیں گے ہم نے پاکستان کو ایک دیوانے کا خواب بناکر رکھ دیا ہے یعنی اس طرح ایک وژنری شخصیت کوبھی دیوانہ قرار دے دیا ہے۔ یہ وہ ظلم ہے جو ہم نے نہ صرف علامہ اور پاکستان کے ساتھ بلکہ اپنے ساتھ بھی کیا ہے۔علامہ اقبال نے اس بعد میں وجود میں آنے والی ریاست کوپہلے ہی اسلامی ریاست قرار دے دیا تھا۔شاید جس زمانے میں وطن عزیز کا نام اسلامی جمہوریہ پاکستان رکھا گیا ، ہمارے عوام کا دینی جذبہ برقرار تھا۔یہ جذبہ اس حد تک برقرار تھا کہ ایوب خان اپنی اس خواہش کو بروئے کار نہ لاسکا کہ اس ملک کا نام تبدیل کرکے جمہوریہ پاکستان رکھ دے یعنی اس کے نام سے لفظ” اسلامی“کو حذف کردے۔اسی جذبے کا نتیجہ تھا کہ دستور ساز اسمبلی نے قرار مقاصد بھی پاس کردیاتاہم اسے دستور کے دیباچے ہی میں جگہ دی گئی۔ اس وقت سے اب تک ہمارے ہاں اسلام کے ساتھ جو کھیل کھیلا جارہا ہے اسے منافقت کے سوا اور کیا نام دیا جاسکتا ہے۔

 اسلامی جمہوریہ پاکستان میں قرارداد مقاصد اور اس شق کی موجودگی کہ یہاں کوئی قانون سازی قرآن و سنت سے متصادم نہیں ہوسکتی ، اس میں ایوب خان کے زمانے میں جاری کردہ عائلی قوانین، تحفظ حقوق نسواں ایکٹ اور اب غیرت کے نام پر قتل کے نام پر جو قانون سازی کی گئی ہے ، ان سب پر علماءکے تحفظات موجود ہیں۔لیکن ان سب ایشوز پر کوئی تحریک نہیں چلائی گئی۔ ہمارے قائدین کو فکر جمہوریت کی ہوتی ہے ۔اس کی بحالی کی فکر تو ہوتی ہے اور اس کے لیے تحریکیں بھی چلائی جاتی ہیں لیکن اسلامی شریعت اور اسلامی قوانین کی پامالی پر کوئی تحریک نہیں چلائی جاتی۔یہ اس قوم کا المیہ ہے۔ایک مقدمے میں ہمارے اس وقت کے چیف جسٹس نے یہ فیصلہ دیا کہ دستور کے تمام دفعات مساوی حیثیت رکھتے ہیں ۔ کسی دفعہ کو کسی دوسرے دفعہ پر کوئی بالادستی نہیں ۔ گویا کہ انہوں نے اللہ کی حاکمیت کا انکار کرکے پارلیمنٹ کی بالا دستی کو قائم رکھا۔ کسی نے اس پر سوال نہیں اٹھایا کہ کہاں گئی اللہ کی حاکمیت اور قرآن وسنت کی بالادستی۔
عوام کو بہلانے کے لیے اسلامی مشاورتی کونسل قائم کی گئی جس کو یہ ٹاسک دیا گیا کہ وہ جاری قوانین کا جائزہ لے اور جو قانون قرآن و سنت سے متصادم ہو اس بارے میں اپنی سفارشات مرتب کرکے حکومت کو پیش کرے ۔ کہتے ہیں کہ ایسی سفارشات کے انبار لگ چکے ہیں لیکن پارلیمنٹ کو فرصت نہیں کہ ان پر غور بھی کرسکے۔ اب تو ہمارے ایک سینئر سینیٹر صاحب نے مطالبہ کیا ہے کہ اسلامی مشاورتی کی اب کوئی ضرورت نہیں۔ اسے ختم کیا جائے۔ ضیاءالحق کے دور میں چند اسلامی شقیں دستور میں ڈالی گئیں اور اللہ کا شکر ہے کہ وہ شقیں اب تک قائم ہیں البتہ جس مقصد کے لیے فیڈرل شریعت کورٹ کو وجود میں لایا گیا تھا ، وہ اب تک پورا نہیں ہوا۔سودکے حوالے سے اس کے فیصلے کا جو حشر کیا گیا اس کی کوئی نظیر نہیں ملتی ۔

 ہمارے حکمراں امریکہ سے ڈرتے ہیں کہ کہیں وہ ہم پر کوئی جنگ مسلط نہ کردے لیکن اللہ سے نہیں ڈرتے اور اس کی حرام کردہ شے کو حلال کرکے یہ تاثر دے رہے ہےںکہ وہ اللہ اور اس کے رسولﷺ کی جانب سے جنگ کے الٹی میٹم کو خاطرمیں نہیں لاتے۔بلکہ اب تو پاکستان کی خالق جماعت کئی حصوں میں تقسیم ہوچکی ہے ۔اس ساری صورتحال کے پیش نظر علامہ اقبال سے معذرت کرتے ہوئے یہ کیوں نہ کہا جائے کہ،

 
 اقبال ترے دیس کا کیا حال سنائیں
 
سنانے کو تو بہت کچھ ہے لیکن پھر وہی کارٹون یاد آتا ہے جس کا ذکر سطور بالا میں آچکا ہے اور قلم چلنے سے انکار کردیتا ہے۔لہٰذا قارئین تھوڑے لکھے کو ہی زیادہ سمجھیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Top