Saturday, October 24, 2020
Home خصوصی رپورٹس کراچی کے 70 ہزار افراد (عبدالرحمٰن عاجز)

کراچی کے 70 ہزار افراد (عبدالرحمٰن عاجز)

1کراچی کی آبادی2 کروڑ 35 لاکھ ہو چکی ہے جبکہ 1947ء میں تقریباً 12 لاکھ تھی۔ آبادی کے لحاظ سے یہ دنیا کا دوسرا بڑا شہر ہے۔ اسے روشنیوں کا شہر بھی کہا جاتا ہے۔ کراچی ملک کا معاشی حب ہے اور اسے منی پاکستان بھی کہا جاتا ہے۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ اس شہر میں روزگار کے بے انتہا ذرائع ہونے کی وجہ سے ملک کے مختلف حصوں کے علاوہ دیگر ممالک جن میں بنگلہ دیش اور برما شامل ہیں، محنت کش روزگار کی تلاش میں آتے رہتے ہیں۔ 1980ء کے عشرے میں جنرل ضیاء الحق نے افغان باشندوں کو اس شہر میں آباد کیا تھا جو کہ لاکھوں کی تعداد میں اس شہر میں موجود ہیں۔ تعلیمی اداروں کی ناقص صورت حال و غیر معیاری تعلیم کی وجہ سے طلبہ و طالبات میں غیر معمولی اور قابل دید صلاحیتیں پیدا نہیں ہو رہی۔ مگر پھر بھی کتنے ہی بیچلرز و ماسٹرز اپنی ڈگریاں لیے دھکے کھا رہے ہیں۔ جبکہ بنا رشوت سرکاری ملازمت کا حصول ایک سپنا سا معلوم ہوتا ہے۔ رشوت خور اور سفارشی بے روزگاروں پر قابض ہیں۔
17سے 23 سال تک کی عمر کے نوجوانوں کی تعداد اس وقت پاکستان میں ساڑھے 6 کروڑ ہے، جبکہ مجموعی نوجوانوں کا شمار کہیں زیادہ ہے۔ مختلف محکموں کے خالی آسامیوں والے اشتہارات دیکھنا ان کا مشغلہ ہے جبکہ اپنے ڈاکومنٹس والی فائل تیار کر کے رکھی ہوتی ہے۔
2
ایسے نوجوان ڈگریاں وصول کرنے پر حصول ملازمت کے لیے اپنے ذاتی کوائف (CV) تمام میسر طریقوں سے مختلف سرکاری و پرائیویٹ محکموں میں صرف پہنچا کر ہی دم نہیں لیتے بلکہ پھر مطلوبہ محکموں میں ان کی آمد و رفت لگی رہتی ہے۔ جس سے وقت کے ساتھ ساتھ خطیر رقم بھی خرچ ہوتی ہے۔ اس وقت کم و بیش 20 لاکھ پاکستانی افردای قوت بیرون ممالک میں اپنی صلاحیتوں کے جھنڈے گاڑ رہے ہیں اور برسر روزگار ہیں۔ بیروزگاری کا عفریت تو یہاں تک اپنے قدم جما چکا ہے کہ آج کا تعلیم یافتہ طبقہ کام کرنے کے لیے تیار ہے مگر ہمارا نظام اس طبقے کی صلاحیتوں کو بروئے کار لانے کے قابل نہیں ہے۔ بیروزگاری ایک خطرناک وائرس کی شکل میں موجود ہے حالانکہ کالجوں، یونیورسٹیوں سے ہر سال لاکھوں کی تعداد میں ڈگری ہولڈرز نکلتے ہیں اور ڈگریاں ہاتھ میں تھامے روزگار کی تلاش میں مارے مارے پھرتے رہتے ہیں۔ جہاں انھیں ہر جگہ ’’نو ویکنسی‘‘ کا جواب ملتا ہے۔
بے روزگاری سے تنگ آئے ہوئے نوجوان یا تو منشیات کی طرف چلے جاتے ہیں یا پھر جرائم کی دنیا کا رخ کرتے ہیں، ہماری حکومت بڑھتے ہوئے جرائم کو کنٹرول کرنے کے لیے طرح طرح کی فورسز تشکیل دیتی رہتی ہے، لیکن بے روزگاری کا سدباب کرنے کی فکر نہیں کرتی۔
3
گزشتہ تمام حکومتوں نے اس جانب کوئی مؤثر اقدامات نہیں اٹھائے اور نہ ہی کسی حکومت نے بیروزگاری کو روکنے کے لیے کوئی منصوبہ بندی کی۔ جس کا نتیجہ یہ ہے کہ لاکھوں تعلیم یافتہ نوجوان برسوں سے حصول روزگار کے لیے بیرون ممالک جانے کی تگ و دو کرتے نظر آتے ہیں۔ جن میں بے شمار تو جعلی ایجنٹوں کے چنگل میں پھنس جاتے ہیں اور جمع شدہ یا بذریعہ قرض حاصل کی ہوئی رقم ضائع کر بیٹھتے ہیں۔
حالانکہ بیرون ممالک بھیجنے کے لیے بھی حکومت کو چاہیے کہ رجسٹرڈ شدہ ادارے یا ایجنٹوں کی نشاندہی کرتے رہیں۔ 2015 میں قانونی طور پر صرف كراچی سے 70 ہزار افراد بیرون ممالک میں ملازمت کے لیے گئے۔ اعداد و شمار كے مطابق گزشتہ سال سیالكوٹ سے33 ہزار، راولپنڈی سے22 ہزار، لاہور سے30 ہزار، دیر سے26 ہزار، گجرات سے 19 ہزار، گوجرانوالہ سے 3 ہزار، سوات سے28 ہزار، فیصل آباد سے31 ہزار اور ڈیرہ غازی خان سے بھی31 ہزار افراد بیرون ملك روزگار كے سلسلے میں گئے
4
ہیں۔ ملک کے ان 10 شہروں سے 3 لاكھ 26 ہزار 494 افراد بیرون ملك گئے ہیں جو کہ یقیناً انتہائی قابل افراد ہیں، جنہیں ہم نے مناسب حکمت عملی نہ کر کے غیرملکیوں کو سونپ دیا جو کہ انتہائی دکھ کی بات ہے کہ کراچی سمیت ملک بھر میں بے پناہ وسائل بھی موجود ہیں۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -

Most Popular

نقلی وزیراعظم نے اپنی ناکامی کا اعتراف کرلیا، مراد علی شاہ

کراچی، وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ نااہل وزیراعظم نے اپنی ڈھائی سالہ ناکامی کا اعتراف کرلیا، مراد علی شاہ کا صحافیوں سے گفتگو...

رینجرز کی کارروائی،2 اسٹریٹ کرمنلز گرفتار

کراچی، سندھ رینجرز کی کارروائی 2 اسٹریٹ کرائم میں ملوث ملزمان گرفتار، ترجمان رینجرز کے مطابق گرفتار ملزمان کی شناخت عبدالمجید اور...

ملازمت کی مستقلی، نرسوں کا دوسرے روز بھی مظاہرہ

کراچی، ملازمت کی مستقلی اور دیگر مطالبات کی منظوری کےلئے نرسوں کا پریس کے کلب کے باہر احتجاج کا دوسرا روز،...

پی ایس ایل کے بقیہ میچز کی میزبانی کراچی کو مل گئی

،کراچی، کرکٹ کے دیوانوں کے لئے خوشخبری، پاکستان سپر لیگ کے بقیہ میچز کی میزبانی کراچی کے حوالے، لاہور میں اسموگ...