بدھ, فروری 8, 2023
spot_imgspot_imgspot_img
Homeسیاستگزشتہ چار ماہ میں جو ہوا اس پر افسوس ہوا، مفتاح اسماعیل...

گزشتہ چار ماہ میں جو ہوا اس پر افسوس ہوا، مفتاح اسماعیل کی اپنی ہی حکومت پر تنقید

سابق وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کا کہنا ہے کہ آئی ایم ایف کے ساتھ معاہدے میں تاخیر سے ملکی معیشت بری طرح متاثر ہوئی ہے۔کوئٹہ میں شاہد خاقان عباسی، سابق سینیٹر مصطفیٰ نواز کھوکھر اور نوابزادہ لشکری رئیسانی کے ہمراہ مشترکہ نیوز کانفرنس کے دوران مفتاح اسماعیل کا کہنا تھا کہ ملک میں اس وقت مشکل معاشی حالات ہیں ، مہنگائی اور بے روزگاری بڑھ رہی ہے، پاکستان میں تعلیم اور صحت کا شعبہ بری طرح متاثر ہوا ہے، 80 فیصد بچے غذائی قلت کا شکار ہیں، ہمیں زراعت بہتر بنانی ہوگی۔سابق وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ حکومتی ادارے اربوں روپے نقصان کر رہے ہیں حکومت کو کچھ فیصلے لینے ہوں گے، ہمیں اپنے لوگوں کو مضبوط کرنے کی ضرورت ہے، وقت آگیا ہے کہ ملک میں لوگوں کو حقوق دیئے جائیں، 18ویں ترمیم سے صوبوں کو کئی معاملات میں خودمختاری ملی لیکن اب ضلعوں کو حقوق ملنے چاہییں۔مفتاح اسماعیل کا کہنا تھا کہ پاکستان کا قرض بڑھ کر 51 ہزار ارب تک پہنچ گیا ہے، کسی حکومت نے گردشیقرضےکا حل نہیں نکالا۔ پاکستان کو رواں برس 21 ارب ڈالر قرض واپس کرنا ہے وقت آگیا ہے کہ اپنی ایکسپورٹ بڑھائی جائیں۔اپنی ہی حکومت پر تنقید کرتے ہوئے مفتاح اسماعیل نے کہا ہے کہ آئی ایم ایف کے ساتھ معاہدے میں تاخیر سے ملکی معیشت بری طرح متاثر ہوئی ہے ، آئی ایم ایف کو واپس لائے تو ملک کے ڈیفالٹ کا خطرہ ٹل گیا لیکن گزشتہ چار ماہ میں جو ہوا اس پر افسوس ہوا۔سابق وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ بنگلا دیش کی طرح پاکستان کو بھی آئی ایم ایف کے ساتھ بیٹھنا ہو گا، خوشی ہے کہ حکومت نے آئی ایم ایف کے ساتھ دوبارہ بیٹھنے کا فیصلہ کیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں

سب سے زیادہ مقبول

Scan the code