Saturday, October 24, 2020
Home اسلام محرم الحرام کی فضیلت(ابوالحسن)

محرم الحرام کی فضیلت(ابوالحسن)

Untitled-1 copy ماہ محرم عظیم الشان اور مبارک مہینہ ہے شھر اللہ یعنی اللہ کا مہینہ کہ کر اس کے شرف کو بیان کیا گیا ہے۔ یہ ہجری سال کا پہلا مہینہ اور حرمت والے چار مہینوں میں سے ایک ہے ۔ فرمان الٰہی ہے ”بے شک مہینوں کی گنتی اللہ کے ہاں لوح محفوظ میں بارہ ہے اور یہ اس دن سے ہے جب سے اللہ نے آسمان اور زمین کو پیدا کیا ہے ان میں سے چار مہینے حرمت اور ادب کے ہیں یہی مضبوط دین ہے لہٰذا تم ان مہینوں میں اپنی جانوں پر ظلم نہ کرو (التوبة 36)
محرم الحرام کا مہینہ حرمت والے مہینوں میں سے ایک ہے حرمت والے مہینوں میں اللہ تعالی نے اپنی جان پر ظلم کرنے سے( یعنی نافرمانی کرنے سے ) منع فرمایا ہے لہٰذا ہمیں اللہ کی نافرمانی سے اجتناب کے ساتھ ساتھ اس ماہ کے دوران نیک اعمال زیادہ سے زیادہ کرنے چاہییں۔ خاص طور پر نفلی روزے زیادہ رکھنے چاہییں کیونکہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد گرامی ہے ”رمضان کے بعد سب سے افضل روزے ماہ محرم کے روزے ہیں جو کہ اللہ کا مہینہ ہے اور فرض نمازوں کے بعدسب سے افضل نماز رات کی نماز ہے۔( مسلم کتاب الصوم باب فضل صوم المحرم )
خاص طو ر پر یوم عاشورا ءیعنی دسویں محرم کا روزہ رکھنا چاہیے ۔ حضرت ابن عباس ؓکہتے ہیں کہ میں نے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کو کبھی نہیں دیکھا کہ آپ کسی دن کو دوسرے دنوں پر فوقیت دیتے ہوئے اسکے روزے کا قصد کرتے ہوں سوائے یوم عاشوراءکے اور سوائے ماہ رمضان کے(صحیح بخاری )یعنی آپ صلی اللہ علیہ وسلم رمضان المبارک کے علاوہ باقی دنوں میں سے یوم عاشوراءکے روزہ کا جس قدر اہتمام فرماتے اتنا کسی اور دن کا نہیں فرماتے تھے۔
حضرت عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہماکہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جب مدینہ منورہ میں آئے تو آپ نے دیکھا کہ یہودی یوم عاشوراءکا روزہ رکھتے ہیں آپ نے ان سے پوچھا تم اس دن روزہ کیوں رکھتے ہو توانہوں نے کہا: یہ ایک عظیم دن ہے اس میں اللہ تعالی نے حضرت موسی علیہ السلام اور ان کی قوم کونجات دی اور فرعون اور اس کی قوم کو غرق کیا چنانچہ حضرت موسی علیہ السلام نے اسی دن کا روزہ شکرانے کے طور پر رکھا اس لئے ہم بھی اس دن کا روزہ رکھتے ہیں اس پر آ پ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : تب تو ہم زیادہ حق رکھتے ہیں اور تمہاری نسبت ہم حضرت موسی علیہ السلام کے زیادہ قریب ہیں پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے خود بھی اس دن کا روزہ رکھا اورصحابہ کرام رضی اللہ عنہم کو بھی اس کا حکم دیا(صحیح بخاری ومسلم )
حضرت ابوقتادة رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول صلی اللہ علیہ وسلم سے یوم عاشوراءکے روزے کا سوال کیا گیا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :یعنی پچھلے ایک سال کے گناہ مٹا دیتا ہے(صحیح مسلم )
اس حدیث کے پیش نظر ہر مسلمان کو یوم عاشوراءکاروزہ کااہتمام کرنا چاہیے اور اتنی بڑی فضیلت حاصل کرنے کا موقعہ ملے تواسے ضائع نہیں کرنا چاہیے چنانچہ جب آپ کو بتلایا گیا کہ یہود ونصاری بھی دس محرم کی تعظیم کرتے ہیں تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس میں ان کی مخالفت کرنے کا عزم کرلیا۔
حضرت عبداللہ بن عباس سے روایت ہے کہ جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے عاشوراء کا روزہ رکھا اور صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کو اسکا حکم دیا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو بتایا گیا کہ یہود ونصاری بھی دس محرم کی تعظیم کرتے ہیں تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :جب آئندہ سال آئے گا تو ان شاء اللہ ہم نو محرم کا روزہ بھی رکھیں گے اس حدیث سے ثابت ہوتاہے کہ صوم عاشوراء میں یہود ونصاری کی مخالفت کرنے کے لیے دس محرم کے روزے کے ساتھ نومحرم کا روزہ بھی رکھنا چاہیے۔ اسی کے قائل حضرت ابن عباس ؓتھے۔
اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ ہمیں اس فضلیت والے ماہ میں زیادہ سے زیادہ اچھے کام کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -

Most Popular

شہباز گل نے کراچی واقعہ کو سازش قرار دے دیا

کراچی: وزیراعظم عمران خان کےمعاون خصوصی شہباز گل نے کراچی واقعہ کو سازش قرار دیدیا اور کہا کہ کیپٹن(ر)صفدر کی گرفتاری کا...

ایف آئی اے کی کراچی میں کارروائی، را نیٹ ورک کا اہم رکن گرفتار

ایف آئی اے نے گلستان جوہر میں کارروائی کرتے ہوئے را تیٹ ورک کا اہم رکن گرفتار کرلیا، ترجمان ایف آئی اے...

کرپشن کا الزام، میونسپل کمشنر اور ڈائریکٹر ایڈورٹائزمنٹ معطل

کراچی:غیر قانونی طریقے سے من پسند کمپنیوں کو اشتہارات کے ٹھیکے دینے اور سرکاری فیس وصولی میں خرد برد کے معاملے پر...

رینجرزکی شہرکےمختلف علاقوں میں کارروائیاں، 18ملزم گرفتار

کراچی: سندھ رینجرز نے شہر کے مختلف علاقوں میں کارروائیاں کرتے ہوئے مختلف وارداتوں میں ملوث 18 ملزمان کو گرفتار کر لیا،...