Tuesday, October 27, 2020
Home انٹرویوز پاکستان میں ای بکس کا بڑھتا ہوا رجحان

پاکستان میں ای بکس کا بڑھتا ہوا رجحان

1جمع، ترتیب و انٹرویو: عارف رمضان جتوئی
ای کتاب کا دور:
کتاب سے انسان کی دوستی ہمیشہ بے مثال رہی ہے۔ دوستی کے اس سفر میں کتاب نہ صرف انسانی علم کو محفوظ بنا کر ہمارے لیے لاتعداد آسانیاں پیدا کرتی رہی بلکہ ترقی کی نئی راہیں بھی کھولتی رہی ہے۔ اس بات سے انکار نہیں کہ کاغذ کے لمس، اس کی خوشبو اور اس کی صفحہ پلٹنے کی آواز کا سرور کبھی ختم نہیں ہوسکتا۔ تاہم وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ کتاب کی نئی شکلوں سے بھی مانوسیت بڑھتی جا رہی ہے۔ کتاب ایک طویل مدت سے کاغذ اور اس پہ پھیلے ہوئے لفظوں کی شکل میں ہمارے سامنے موجود ہے۔ لیکن سائنس اور ٹیکنالوجی کی ترقی نے یہ بات طے کر دی کہ کتاب نئی شکلیں بھی اختیار کرے گی۔ یہ کاغذ سے ڈیجیٹل شکل میں بھی منتقل ہوچکی ہے۔ جسے کمپیوٹر یا موبائل کی اسکرین پر با آسانی پڑھا جا رہا ہے۔
الیکٹرونک کتاب یا ای کتاب سے مراد ایسی کتاب ہے جو کاغذ کے بجائے ڈیجیٹل شکل میں موجود ہو یعنی اسے موبائل، کمپیوٹر یا کسی دوسرے الیکٹرونک آلے کی اسکرین پہ پڑھا جائے۔ اسی طرح الیکٹرونک ریڈر یا ای ریڈر موبائل جیسا آلہ ہے جس کی اسکرین کو الیکٹرونک کتاب پڑھنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔
3
دنیا میں پہلی الیکٹرونک کتاب (ای کتاب (1971ء میں سامنے آئی جب مائیکل ایس۔ ہارٹ نے امریکی آزادی کا اعلامیہ کمپیوٹر میں ٹائپ کیا۔ اسی نے گٹن برگ منصوبہ بھی شروع کیا جس کا مقصد دوسری کتابوں کی الیکٹرونک نقول تیار کرنا تھا۔ ابتدا میں الیکٹرونک کتابیں تکنیکی معلومات سے تعلق رکھنے والے موضوعات پہ تیار کی جاتی تھیں۔ 1990 ءکے عشرے میں انٹرنیٹ کو مقبولیت حاصل ہوئی تو کاغذی کتابوں کے ساتھ ساتھ ان کی الیکٹرونک نقول بھی سامنے آنے لگیں۔
آج یہ دور آگیا ہے کہ کتاب منتخب کرنے، خریدنے اور اسے پڑھنے کا تجربہ بہت مختلف ہوگیا ہے۔ قارئین کتاب خریدنے کے لیے اپنے موبائل کمپیوٹر کے ذریعے انٹرنیٹ پہ موجود اسٹور پر جاتے ہیں وہاں ادب، صحت، سیاست، نفسیات، کھیل اور سائنس جیسے مختلف موضوعات پہ لاکھوں کتابیں ان کی منتظر ہوتی ہیں جنہیں وہ فری میں منتخب کرتے ہیں اور اپنے پاس ڈاﺅن لوڈ کر کے محفوظ کر لیتے ہیں اور پھر پڑھتے ہیں۔ بہت سی نایاب کتابیں یا بہت ہی اہم کتابیں اچھی کوالٹی کی پڑھنے کے لیے آن لائن ڈالر کے بدلے میں خریدی بھی جارہی ہیں۔
14797335_1422119247800084_408481217_n
ایمزون انٹرنیٹ پر کتابیں فروخت کرنے والا دنیا کا سب سے بڑا ادارہ سمجھا جاتا ہے۔ یہ 1995ءمیں امریکا میں قائم ہوا۔ دنیا کا مقبول الیکٹرونک ریڈر، کینڈل بھی ایمزون نے متعارف کروایا۔ یہ موبائل جیسا آلہ ہے جس کی اسکرین پہ الیکٹرونک کتاب کو پڑھاجا سکتا ہے۔ کینڈل کے ذریعے قارئین ایمزون کے آن لائن بک اسٹور تک جا سکتے ہیں۔
گوگل ای بکس پروگرام انٹرنیٹ سرچ سے تعلق رکھنے والی کمپنی گوگل کی طرف سے 2010ءمیں شروع ہوا۔ اس کے ذریعے صارف گوگل کے ای بک اسٹور سے خریدی گئی الیکٹرونک کتابیں آن لائن پڑھی جاسکتی ہیں۔ اس پر کتابوں کی تعداد لاکھوں میں موجود ہے۔ صارفین یہ کتابیں لیپ ٹاپ، اسمارٹ فون ، موبائل اور کمپیوٹر میں ڈاﺅن لوڈ کر کے یا پھر آن لائن پڑھ سکتے ہیں۔

5

پاکستان میں چند ایسے منصوبے موجود ہیں جن کے ذریعے الیکٹرونک کتابوں تک لوگوں کو رسائی دی جا رہی ہے۔ ہائریجوکیشن کمیشن کا ادارہ اپنے نیشنل ڈیجیٹل لائبریری پروگرام کے تحت طالب علموں کی علمی جرائد کے ساتھ ساتھ الیکٹرونک کتابوں تک رسائی ممکن بنا رہا ہے۔ اس لائبریری میں 75 ہزار سے زائد کتابیں، جرائد اور مضامین موجود ہیں۔ اسی طرح انفارمیشن ٹیکنالوجی کے منصوبوں پر مزید کام جارہی ہے جس کا مقصد قومی اور دیگر مقامی زبانوں میں انٹرنیٹ پہ مواد کی فراہمی ہے۔ اس لائبریری میں مذہب، ادب، تاریخ اور سائنسی موضوعات پہ کتب موجود ہیں۔
ای کتاب کی مارکیٹ میں ایپل اور گوگل کا کام بھی نمایاں ہے۔ تجزیہ کاروں کا کہناہے کہ ایپل اور گوگل جیسی بڑی ٹیکنالوجی کمپنیوں کے آنے سے مسابقت کا رجحان بڑھے گا۔ اس سے قارئین کو کم قیمت الیکٹرونک کتب اور الیکٹرونک ریڈر ملیں گے۔ یہ قارئین کی زیادہ کتابوں تک رسائی کو یقینی بنائے گا۔ ای کتابویں کے وجود میں آنے سے مخصوص طبقات کی اجارہ داری ختم ہوئی اور عام لوگوں تک بہت آسانی سے کتب پہنچیں۔ اسی طرح الیکٹرونک کتاب عام لوگوں کے علم کے ذریعے ترقی میں اہم کردار ادا کرے گی۔
الیکٹرونک کتاب یا ای بک انٹرنیٹ پر آن لائن پڑھی جاتی ہے۔ جس کے لیے بہت سے افراد اپنی تئیں بہت کچھ کر بھی رہے ہیں۔ کراچی اپڈیٹس نے اسی سلسلے میں نمایاں کام سرانجام دینے والے فیس بک پیج اردو ناولز پی ڈی ایف کے ایڈمن وقاص نواز سے مختصر سا تعارفی انٹرویو کیا۔ جو قارائین کی نذر کیا جا رہا ہے۔
6
کراچی اپڈیٹس: اپنے پیج اور اپنے حوالے سے کچھ بتایے؟
ایڈمن پیج: تقریبا9، 8 سال پہلے کی بات ہے، اردو ناولز کو پڑھنے کا اچھا خاصا شوق ہے۔ ایک دن مجھے میرے ایک دوست نے کمپیوٹر میں پی ڈی ایف فارمیٹ میں ایک ناول دیا جو کہ میرے لیے اس وقت ایک نیا تجربہ تھا۔ میں نے نیٹ سے مزید ناولز ڈھونڈنا شروع کر دیے۔ آہستہ آہستہ مجھے ناولز ملتے گئے جن کو میں اپنے پاس جمع کرتا گیا۔ جب میرے پاس 50، 40 ناولز اکٹھے ہوگئے تو خیال آیا کہ جس طرح مجھے یہ ناولز پڑھنے اور ڈھونڈنے کا شوق ہے اس طرح اور لوگوں کو بھی ہو گا تو کیوں نہ میں یہ ناولز لوگوں کو بھی دوں جو یہ ڈھونڈ رہے ہوں گے۔ پھر ایک ویب سا ئٹ پر وہ ناولز ڈالنا شروع کر دیے جسے لوگوں نے کافی سراہا۔ جب ناولز کی تعداد 200 کے آس پاس ہوئی تو لوگوں کے مشورے سے میں نے اپنی ویب سائٹ بنا لی جس پر اردو ناولز اپ لوڈ کیے گئے۔ ویب سائٹ کو مزید مصروف بنانے کے لیے فیس بک کا پیج مئی2011ءمیں بنا یا گیا تھا جبکہ ویب سائٹ اگست 2011ءمیں بنائی گئی تھی۔
کراچی اپڈیٹس: آپ کے ایڈمن کا تعارف؟
ایڈمن پیج: ہمارے ایڈاور ایڈیٹرز میں وقاص نواز (بی ٹیک، مکینیکل) ( ایم بی اے مارکیٹنگ)، اظہر گِل(بی ایس سی آنرز ایگریکلچر، ایل ایل بی، ایم ایس سی کرمنالوجی، ایم فل کرمنالوجی)، مس شایان ملک ( صحافت میں گریجویشن اور انگریزی ادب میں ماسٹرز ) محمد واصف (ایم ایس الیکٹریکل انجینئرنگ)، سیدہ ما ہ نور کاظمی ( ایم ایس سی سوشل سائنس، ایم ایس کلینیکل سائیکولوجی (فائنل تھیسس ان پروگرس)، محمد حسنین رضا (درس نظامی، بی اے )، مناہل چوہدری ( ایم ایس سی، اکنامکس)، آسیہ علی( بی ایس، جیو فزکس، ایم ایس سی انگریزی) اور مہوش حنا (ایم ایس سی اکنامکس ) شامل ہیں۔
کراچی اپڈیٹس: آپ نے پیج کیوں اور کب شروع کیا؟
ایڈمن پیج: اردو ناولز لوگوں تک پہنچانے کے لیے یہ پیج شروع کیا گیا ۔ اس کا آغاز 19 مئی 2011ءسے ہوا۔ شروع میں ہمارے ساتھ کوئی نہیں تھا اور مختصر ٹیم تھی مگر بعد ازاں بیج کی افادیت اور ضرورت کے پیش نظر ایڈمن کی تعداد میں بھی اضافہ ہوا اور کام بھی میں بھی اضافہ ہوتا چلا گیا۔
8
کراچی اپڈیٹس: آپ کے پیج پر کیا خاص بات ہے؟
ایڈمن پیج: عموما فیس بک پر پیج جن مقاصد کے لیے بنائے جاتے ہیں وہ واضح ہوتے ہیں۔ مگر ہمارے پیج کے مقاصد شاید اتنے واضح نظر نہیں آئے۔ تاہم ناولز کی موجودگی جو کہ اصل میں ہماری ویب سائٹ پر موجود ہیں۔کسی بھی قسم کے ناولز جنہیں ریڈر آن لائن مطالعہ کرنا چاہیں وہ ہماری ویب سائٹ www.urdunovelspdf.com پر جا کر پی ڈی ایف میں ناول کو ڈاﺅن لوڈ کر کے پڑھ سکتے ہیں۔
کراچی اپڈیٹس: آپ نے پیج سے کیا حاصل کیا مقصد میں کس حد تک کامیابی ملی اور آپ کے پیج پر وزٹرز کا تاثر کیا رہا؟
لو گوں تک ناولز اور ادب پہنچانے کی کوشش کی جس میں ہم کافی حد تک کامیاب ہیں۔ پیج کے وزٹرز ہمارے کام کو سراہتے ہیں۔ دوسری بات یہ ہے کہ کسی بھی چیز کو نیٹ کی دنیا میں سرچ کرنا شروع کردیا جائے تو اتنا وقت لگ جاتا ہے کہ پڑھنے والا اکتا کر بالآخر چھوڑ دیتا ہے۔ تاہم وہ تمام کام جو انٹرنیٹ صارفین کو کرنا پڑتے ہم نے کر کے اپنی ویب سائٹ پر ڈال دیا ہے۔ انہیں ایک ہی جگہ پر بہت کچھ بہت جلد اور آسانی سے میسر آجاتا ہے۔
کراچی اپڈیٹس: آپ نے پیج کو کیسے ہینڈل کیا اور آگے کیا ارادہ رکھتے ہیں ؟
ایڈمن پیج: کچھ مصروفیات کی وجہ سے کام میں کمی آئی تاہم مزید ایڈمنز بھی ساتھ میں ایڈ کیے جا ئیں جو ہمارے ساتھ اس پیج پر آگے چلیں۔ میرے ایڈمنز نے اس کام میں میرا کافی ساتھ دیا جن کی وجہ سے آج یہ پیج اس اسٹیج پر ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ میں نے ایک نیا کام شروع کرنے کی کوشش کی ہے اور وہ یہ ہے کہ آن لائن ہمارے پیج پر ناولز کو باقاعدہ طور پر بیچا جا رہا ہے جس سے کتابیں لوگوں کو ان کے گھر میں مہیا کی جا رہی ہیں۔ پاکستان میں اور دنیا بھر میں بہت سے لوگ آن لائن پڑھنے کی بجائے کتاب خرید کر پڑھنے کو بہت ترجیح دیتے ہیں اس لئے یہ کام شروع کیا۔
14801007_1422118964466779_1066452366_n
کراچی اپڈیٹس: سوشل میڈیا کا کیسا استعمال ہونا چاہیے؟
پیج ایڈمن: آج کل سوشل میڈیا پر زیادہ تر خبریں ہی ہوتی ہیں، جن میں سے آدھی تو جھوٹ نکل آتی ہیں۔ پھر بھی بہت سے پیج اردو ادب پہ کام کر رہے ہیں اور ان کا کام قابل ستا ئش ہے۔ سوشل میڈیا پر ہمارے اکثر نوجوان وقت کا ضیاع زیادہ اور تعمیری کام کم کرتے ہیں۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ فیس بک کے ذریعے ہم دنیا میں امن کا پیغام پہنچائیں اور لوگو ں کو بتا ئیں کہ پاکستان دہشت گرد ملک نہیں بلکہ دہشت گردی کا شکار ملک ہے۔اس کے ساتھ ساتھ ہماری اردو ہماری پہچان ہے۔ اپنے مطالعہ سے اپنی اردو کو بہتر سے بہتر کیا جاسکتا ہے۔
میرا تمام نوجوانوں کے لیے یہ پیغام ہے کہ وہ سوشل میڈیا سمیت کہیں بھی جائیں اپنے وقت کا بہتر سے بہتر استعمال کریں۔ ہمارے یہاں مطالعے کا فقدان ہے جس کے لیے اردو ناولز کو آن لائن پڑھیں۔ اس طرح نہ صرف اردو بہتر ہوگی بلکہ جنرل نالج بھی بڑھے گا۔ مطالعے میں کیا ہونا چاہے اس پر میں یہ کہوں گا کہ آپ کچھ بھی پڑھ سکتے ہیں تاہم کم وقت میں بہتر مطالعہ چاہتے ہیں تو اس کے لیے سب سے پہلے کتب کی سلیکشن کریں۔ اس کے بعد منتخب کتابوں کا مطالعہ کریں۔ اس طرح بہت کم وقت میں بہت کچھ اچھا حاصل ہو گا۔
فیس بک پیج کا لنک
https://www.facebook.com/UrduNovelspdf/

 

اگر آپ فیس بک پر کس قسم کا کوئی پیج چلا رہے ہیں اور اس کے فینز کی تعداد ایک لاکھ سے زیادہ ہے تو کراچی اپ ڈیٹس پر اس کو متعارف کروانے کے لیے رابطہ کریں 
arif.jatoi1990@gmail.com

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -

Most Popular

گلشن اقبال ، خطرناک ڈکیت پولیس کے ہتھے چڑھ گیا

کراچی، گلشن اقبال پولیس کی بڑی کارروائی، درجنوں وارداتوں میں مطلوب ملزم گرفتار۔ پولیس کے مطابق ملزک صدیق پولیس کو اسٹریٹ، قتل...

ملازمت پیشہ خواتین کے مسائل، اور ان کا حل

تحریر: مریم صدیقی وہ تھکی ہاری شام کے 4 بجے آفس سے نکلی، 4:30 بجے گھر میں...

ولیکا آتشزدگی، واٹر بورڈ نے ایمرجنسی نافذ کردی

کراچی ،واٹر اینڈ سیوریج بورڈ نے سائٹ ٹاؤن ولیکا اسپتال کے قریب فیکٹری میں آتشزدگی کے بعد سخی ھسن ہائیڈرنٹس پر...

کراچی سمیت سندھ میں ٹڈی دل کے حملوں کا خطرہ

کراچی ،سندھ میں پھرفصلوں پرٹڈی دل کےحملےکاخدشہ محمکہ زراعت سندھ نےٹڈی دل کےحملےکانیاالرٹ جاری کردیا ۔ محکمہ زراعت کے حکام کا...