Sunday, January 24, 2021
"]
- Advertisment -

مقبول ترین

ادارہ نورحق، سعید غنی کی سراج الحق سے ملاقات

وزیرتعلیم سندھ سعید غنی کی ادارہ نور حق آمد، امیر جماعت اسلامی سراج الحق سے ملاقات، ذرائع کے مطابق سعید غنی نے ملاقات میں...

سندھ حکومت کا شاپنگ مالز مالکان کےلئے بڑا فیصلہ

 سندھ حکومت کا بڑا فیصلہ، ہفتے بھر رات گئے تک تمام شاپنگ مالز کو کھلے رہنے کی اجازت، ذرائع کے مطابق سندھ حکومت نے...

مراد علی شاہ اور علی زیدی کے وزیراعظم کو خطوط

جمعہ کے روز کراچی انسفارمیشن پلان کے اجلاس میں وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ اور وفاقی وزیر علی زیدی کے مابین ہونےوالی تلخ کلامی...

شہر بھر میں 24 گھنٹے کےلئے سی این جی اسٹیشن کھل گئے

آٹھ دن کی بندش کے بعد سی این جی اسٹیشن اتوار کی صبح 8 بجے سے پیر کی صبح 8 بجے تک کھلے رہیں...

بائیومیٹرک تصدیق مہم : موبائل نیٹ ورکس کو 80 کروڑ روپے کا نقصان

2sim-cards-hack-attacksکراچی: موبائل فون سموں کی بائیومیٹرک ویریفکیشن کی مہم پاکستان میں کام کرنے والی ٹیلی کام آپریٹرز کے ریونیو اور منافع میں کمی کا سبب بنے گی تاہم قومی سلامتی کے لیے موبائل فون کمپنیوں کی جانب سے اس مہم کے دوران اپنی سماجی ذمے داری کی ادائیگی کے جذبے کو ٹیلی کام ریگولیٹرز سمیت متعلقہ وزارتوں نے قابل تحسین قرار دیا ہے۔ ٹیلی کام انڈسٹری کے ماہرین کے مطابق جنوری سے شروع ہونے والی اس مہم کے دوران اپریل تک ریٹیل چینلز سے نئی سموں کی فروخت بند رہنے سے آپریٹرز کو ریونیو کی مد میں تقریباً 80 کروڑ روپے کا نقصان اٹھانا پڑا، مالی سال 2013-14 کے دوران نئی سموں کی اوسط ماہانہ فروخت 10لاکھ سم رہی، اس لحاظ سے 4 ماہ کے دوران آپریٹرز کو سموں کی فروخت میں 40لاکھ کمی کا سامنا کرنا پڑا، مالی سال 2013-14 میں موبائل فون کمپنیوں کے اوسط ماہانہ ریونیو 200روپے فی صارف کے لحاظ سے کمپنیوں کو صرف ریونیو کی مد میں 80کروڑ روپے کا نقصان اٹھانا پڑا، موبائل فون آپریٹرز نے بائیومیٹرک تصدیق کے لیے ملک بھر میں 80 ہزار سے زائد ڈیوائسز نصب کیں جن کی اوسط قیمت 350سے 400ڈالر بتائی جاتی ہے، کمپنیوں نے سموں کی تصدیق کے لیے ریٹیل چینل کے ساتھ غیرروایتی طریقے بھی اختیار کیے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

Open chat