Tuesday, October 27, 2020
Home خصوصی رپورٹس باپردہ طالبات زیاہ تحفظ محسوس کرتی ہیں (سروے: صفورا نثار)

باپردہ طالبات زیاہ تحفظ محسوس کرتی ہیں (سروے: صفورا نثار)

1379621_608416425861896_1905389424_n”گھر سے نکلتے وقت حجاب کا خصوصی خیال رکھتی ہوں، کیونکہ حجاب وقار میں اضافہ کرتا ہے۔ سچی بات یہ ہے کہ حجاب کے بغیر خود کو غیر محفوظ تصور کرتی ہوں، میری کوشش ہوتی ہے کہ حجاب زیب و زینت کی بجائے اللہ کے لیے ہو“۔ یہ الفاظ جامعہ کراچی کی طالبہ ارم نے یوم حجاب کے موقع پر خصوصی گفتگو کرتے ہوئے ادا کیے۔ وہ شعبہ نفسیات میں ایم اے کی طالبہ ہے۔ یہ صرف ایک طالبہ کے جذبات نہیں بلکہ ایسی ہزاروں طالبات ہیں جو حجاب میں خود کو محفوظ تصور کرتی ہیں۔ شعبہ ابلاغ عامہ جامعہ کراچی کی طالبہ فوزیہ کا کہنا ہے کہ ”یونیوسٹی کی طالبات میں حجاب کے حوالے سے آگاہی دیکھنے میں آرہی ہے۔ اگرچہ بطور فیشن بھی لڑکیاں حجاب پہنتی ہیں، لیکن حجاب کی اہمیت و فوائد سے اب شاید ہی کسی لڑکی کو انکار ہو“۔ ان کا مزید کہنا تھا ” نئی نسل میں مذہبی رجحان بڑھتا ہوا نظر آرہا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ جامعہ کی طالبات بھی حجاب کا استعمال زیادہ مناسب سمجھنے لگی ہیں، کیونکہ اس کے بغیر اب کوئی لڑکی بھی خود کو محفوظ تصور نہیں کرتی“۔

article-1192528-0553BB77000005DC-841_468x324خواتین میں پردے کا رجحان بڑی تیزی کے ساتھ فروغ پارہا ہے۔ یہ بات خوش آئند ہے کہ شہر کے پوش علاقوں کی خواتین بھی پردے کی طرف راغب ہو رہی ہیں۔ گھریلو خواتین کے علاوہ دفاتر میں کام کرنے والی خواتین اور کالج و جامعات کی طالبات بھی پردے کو اپنا رہی ہیں۔ ایک جائزے کے مطابق شہرکے سرکاری و نجی جامعات میں پردہ کرنے والی طالبات کی شرح 75فیصد سے زیادہ ہے۔ پردے کے حوالے سے طالبات میں یہ خیال راسخ ہوتا جا رہا ہے کہ وہ خود کو حجاب میں محفوظ سمجھتی ہیں۔ طالبات کا کہنا ہے کہ حجاب کسی طور پر بھی اعلیٰ تعلیم کی راہ میں رکاوٹ نہیں بلکہ حجاب مہذب معاشرے کی پہچان بنتا جا رہاہے۔ اس حقیقت سے بھی انکار نہیں کیا جا سکتا کہ عورت کے تحفظ میں اس کے لباس کا بڑا عمل دخل ہے۔ جو طالبات باپردہ ہو کر پڑھنے جاتی ہیں، وہ اوباش لڑکوں کے چھیڑ چھاڑ اور ایذارسانی سے محفوظ رہتی ہیں۔
حیرت انگیز پہلو یہ ہے کہ ملک کے تقریباََ تمام ٹی وی چینلز پر حیا باختہ پروگرامات کی بھرمار ہیں، جبکہ رسائل و جرائد میں متعدد ایسے ضمیمے بھی شائع ہو رہے ہیں جو معاشرے میں بے پردگی کو رواج دینے کا سبب بن رہے ہیں۔ لیکن اس کے باوجود غریب اور متوسط طبقوں کے علاوہ امیر گھرانوں کی خواتین بھی بڑی تیزی کے ساتھ پردے کو اپنا رہی ہیں۔ اگرچہ جامعہ کراچی میں حجاب کیے بغیر آنے والی طالبات کی تعداد بھی کچھ کم نہیں، لیکن حجاب کے رجحان میں اضافے کے سبب اب بے حجاب طالبات خود کو نفسیاتی طور پر دباﺅ میں محسوس کرتی ہیں۔ یہی وجہ ہے جب بے حجاب طالبات سے ان کی رائے معلوم کرنے کی کوشش کی گئی تو نہ صرف وہ اپنی بے حجابی پر شرمندہ نظر آئیں بلکہ انہوں نے حجاب کے حق میں نیک خواہشات کا اظہار بھی کیا۔
11162119643_2b00dd897d_mدوسری طرف گزشتہ برسوں کی طرح امسال بھی شہر قائد کی سب سے بڑی یونیورسٹی جامعہ کراچی میں ”ایجوکیشن سوسائٹی“ کے زیر اہتمام یوم حجاب منایا گیا۔ اس دوران طالبات نے جامعہ کے مختلف شعبوں میں حجاب کی افادیت کو اجاگر کرنے کے لیے کوئزمقابلے، تھیٹر، تقاریر اور واک بھی کیا۔ جامعہ کے مختلف شعبہ جات کی خواتین اساتذہ نے بھی واک میں شرکت کی۔ ایجوکیشن سوسائٹی کے صد ر انتظار حسین، جنرل سیکریٹری ماہرہ شعیب سمیت دیگر مقررین نے کہا کہ حجاب مسلم خواتین کی پہچان ہے، مغرب کے حجاب کی بجائے خواتین کو مکمل حجاب کرنا چاہئے۔ ان کا کہنا تھا کہ اسلام نے عورت کو نمایاں مقام دیا، حجاب کو عورت کے لیے لازم قرار دیا گیا۔ لہٰذا ہمیں چاہئے کہ اسلام کے فلسفہ حجاب کو سمجھتے ہوئے اس پر عمل کریں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستا ن سمیت دنیا بھر میں حجا ب کے استعمال میں زبردست اضافہ دیکھنے میں آ رہا ہے جو کہ خوش آئند ہے۔ یوم حجاب کے حوالے سے منعقدہ کوئز و دیگر مقابلوں میں حجاب انعام کی صورت میں دیے گئے جبکہ سینکڑوں حجاب طالبا ت اور اساتذہ میں بھی تقسیم کیے گئے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here

- Advertisment -

Most Popular

کراچی ترقیاتی کمیٹی کا نالوں پر قائم آبادیوں کو منتقل کرنے کا فیصلہ

کراچی: وزیر اعلی سندھ مراد علی شاہ کی سربراہی میں کمیٹی کا اجلاس ہوا، جس میں صوبائی وزیر سعید غنی، کور کمانڈر...

سرجانی ٹاؤن, 5سالہ بچی عروہ فہیم گھر کے قریب سے اغواء

کراچی:سرجانی ٹاؤن سیکٹر4 ڈی سے 5 سالہ بچی عروہ فہیم گھر کے قریب سےاغواء ,پولیس کے مطابق گزشتہ روز پیر تقریبا رات...

داود یونیورسٹی کے طلبا یونیورسٹی انتظامیہ سے سخت ناراض

کراچی؛ ایم اے جناح روڈ پر واقع داود یونیورسٹی آف انجینئرنگ اینڈ ٹیکنولوجی کے طلبا انتظامیہ پر برس پڑھے ، انٹرنیٹ کی...