Saturday, October 24, 2020
Home Trending سائنس دانوں نے تیز رفتار آپٹیکل فائبر تخلیق کرلیا

سائنس دانوں نے تیز رفتار آپٹیکل فائبر تخلیق کرلیا

Internetveryfastکراچی، ماضی کے مقابلے میں انٹرنیٹ کی رفتار کئی گنا بہتر ہوگئی ہے پھر بھی ہمیں بعض فائلیں مثلاً موویز ڈاﺅن لوڈ کرنے کے لیے بعض اوقات گھنٹوں انتظار کرنا پڑتا ہے، جس سے ہمیں کوفت ہوتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ سائنس داں انٹرنیٹ کو مزید تیز رفتار بنانے کے لیے مسلسل مصروف عمل ہیں۔ اس ضمن میں سائنس دانوں نے ایک تیزرفتار نیٹ ورک کی تخلیق کی صورت میں انقلابی کامیابی حاصل کی ہے۔
ڈنمارک کے سائنس دانوں نے اگلی نسل کا آپٹیکل فائبر تخلیق کرلیا ہے جس میں سے فی سیکنڈ 43 ٹیرابٹ ڈیٹا گزرسکتا ہے ( ایک ٹیرابٹ میں 1000 گیگابٹ ہوتے ہیں)۔ ڈیٹا کی یہ مقدار کتنی ہوگی اس کا اندازہ اس بات لگایا جاسکتا ہے کہ اس آپٹک فائبر کے ذریعے ایک پوری فلم صرف 0.2 ملی سیکنڈ میں، یعنی پلک جھپکتے ہی ڈاﺅن لوڈ ہوجائے گی۔
یہ جدید ترین آپٹیکل فائبر ٹیکنیکل یونی ورسٹی آف ڈنمارک کے سائنس دانوں کی تخلیق ہے۔ ان کا دعویٰ ہے کہ اس کے ذریعے ایک گیگا بٹ ڈیٹا محض 0.2 سیکنڈ میں منتقل ہوجائے گا۔
اس سے قبل تیز ترین آپٹیکل فائبر تیار کرنے کا اعزاز جرمنی کے کارلرو انسٹیٹوٹ فار ٹیکنالوجیز کے پاس تھا۔ مذکورہ انسٹیٹیوٹ کے ماہرین کے تیارکردہ آپٹیکل فائبر نیٹ ورک سے فی سیکنڈ 32 ٹیرابٹ ڈیٹا گزر سکتا تھا۔
جدیدترین آپٹیکل فائبر نیٹ ورک کی تیاری کے لیے ٹیکنیکل یونی ورسٹی کے محققین نے جاپانی کمپنی ’ نپن ٹیلی گراف اینڈ ٹیلی کارپوپریشن کا تیارہ کردہ سنگل ملٹی کور آپٹیکل فائبر استعمال کیا۔ اس قسم کے فائبر میں سات کور ( شیشے سے بنے دھاگے ) ہوتے ہیں جب کہ عام فائبر ایک کور پر مشتمل ہوتا ہے۔ شیشے سے بنے دھاگوں کی زائد تعداد کی وجہ سے اس میں سے ڈیٹا کی منتقلی کئی گنا تیزی سے عمل میں آتی ہے۔ دل چسپ بات یہ ہے کہ اس خصوصی آپٹیکل فائبر کی موٹائی عام آپٹیکل فائبر ہی کے برابر ہے۔
محققین کا کہنا ہے کہ عالمی سطح پر ڈیٹا کی منتقلی کو تیزترین بنانے کا مقابلہ جاری ہے جس کے نتیجے میں ایسی ٹیکنالوجیز ڈیولپ ہورہی ہیں جو انٹرنیٹ پر ڈیٹا کے ہر لمحہ بڑھتے حجم کو اپنے اندر سموسکیں۔
ایک اندازے کے مطابق انٹرنیٹ پر سفر کرنے والے ڈیٹا کی مقدار ایک سال کے دوران 40 سے 50 فی صد تک بڑھ جاتی ہے۔ آنے والے دنوں میں ڈیٹا کی مقدار میں کئی گنا تیزی سے اضافہ ہوگا۔ کیوں کہ اب انٹرنیٹ کا استعمال محض کمپیوٹر اور اسمارٹ فون تک محدود نہیں رہا بلکہ ہر روز ایسے آلات سامنے آرہے ہیں جن میں انٹرنیٹ کی سہولت دی گئی ہوتی ہے۔
انٹرنیٹ کا ایک اور ر±خ اس ٹیکنالوجی کے استعمال کے نتیجے میں ہونے والا کاربن ڈائی آکسائیڈ کا اخراج ہے۔ عالمی سطح پر اس گیس کے اخراج میں انٹرنیٹ کا حصہ فی الحال دو فی صد ہے۔ آنے والے دنوں میں انٹرنیٹ کا استعمال بڑھنے کے ساتھ ساتھ کاربن ڈائی آکسائیڈکے اخراج میں بھی اضافہ ہوگا۔
اس تناظر میں بھی ایسی ٹیکنالوجیز انتہائی اہمیت کی حامل ہیں جو انٹرنیٹ کے استعمال کے دوران توانائی کی کھپت محدود کرنے میں معاون ہوں۔ آپٹیکل فائبر نیٹ ورک انٹرنیٹ کو تیزرفتار بنانے کے ساتھ ساتھ توانائی کا استعمال محدود کرنے میں بھی اہم

- Advertisment -

Most Popular

اسٹیل ٹائون میں پولیس کا قبضہ مافیا کے خلاف کارروائی 10 گرفتار

کراچی، پولیس اسٹیل ٹائون میں قبضہ مافیا کے خلاف کریک ڈائون،10 افراد گردفتار،، پولیس کے مطابق گرفتار کرئے گئے افراد غیر...

ایڈیشنل آئی جی غلام نبی میمن کو کورونا ہوگیا

کراچی، ایڈیشنل آئی جی سندھ غلام نبی میمن کی کورونا رپورٹ مثبت آگئی، پولیس زرائع کے مطابق غلام نبی میمن نے جمعہ...

ربیع الاول کے جلوس کو مکمل سیکورٹی دینگے، مراد علی شاہ

کراچی، وزیراعلیٰ سندھ کے زیر صدارت ربیع الاول کے جلوس کی سیکورٹی کے حوالے سے اجلاس، علما کرام کی شرکت، مراد...

اسکول فیس رعایت, سندھ حکومت نے والدین پر بجلی گرادی

کراچی : سندھ حکومت نے طلبا کو فیس میں 20 فیصد رعایت دینے کا فیصلہ واپس لےلیا اور کہا فیسوں میں کمی...