Monday, November 23, 2020
- Advertisment -

مقبول ترین

سی ویو پر سائیکلنگ کرنے والوں کے خوش خبری

سی ویو پر سائیکلنگ کرنے والوں کے خوش خبری، کنٹونمنٹ بورڈ نے سی ویو پر تین کلو میٹر...

وزیراعلیٰ کی سربراہی میں سیف سٹی اتھارٹی قائم

کراچی سمیت سندھ کے برے شہروں میں سیف سٹی پروجیکٹ شروع کرنے کےلئے اتھارٹی قائم،اتھارٹی کے سربراہ وزیراعلیٰ...

ایس ایچ او شپ کا امتحان پاس کرنےوالے 4 اہلکاروں کی تعیناتی

آئی جی سندھ مشتاق مہر کی جانب سے بنائی گئی کمیٹی و پالیسنگ کے تحت ایس ایچ او...

سڑک پر کچرا کیوں پھینکا،21 افراد گرفتار

مقررہ جگہوں کے علاوہ کچرا پھینکنے پر 21 افراد جیل روانہ ،ضعلی انتظامیہ کے مطابق نارتھ کراچی سے...

پانی کو 100 ڈگری پر ابال کر نگلیریا سے بچاؤ ممکن ہے، ماہرین

negleria hospital1کراچی: نگلیریا ایک ایسا جر ثومہ ہے جو ناک کے ذریعے انسانی دماغ کو متاثر کر کے جان لے لیتا ہے۔ماہرین طب کے مطابق نگلیریا سے بچاو کیلئے پانی میں کلورین کی مقدار کو پورا کیا جائے جبکہ پانی کو 100 ڈگری پر ابالنے سے بھی اس جرثومے کو با آسانی ختم کیا جا سکتا ہے۔ نگلیریا کا جرثومہ صاف پانی میں پرورش پاتا ہے اور ناک کے ذریعے انسانی دماغ کی جھلی کو متاثر کر تے ہو ئے دماغ کو کھانے کی صلاحیت رکھتا ہے،جس سے موت واقع ہوجاتی ہے ۔نگلیریا منہ کے ذریعے سے دماغ تک نہیں پہنچتا اور نہ ہی یہ جرثومہ کھارے پانی میں زندہ رہ پاتا ہے۔ طبی ماہرین کے مطابق نگلیریا سے بچاؤ کیلئے پانی میں کلورین کی مقدار اعشاریہ 5 ہونا ضروری ہے۔ماہرین طب کا یہ بھی کہنا ہے کہ گھروں میں موجود ٹینکوں کو سال میں کم سے کم دو بار صاف کیا جائے،کلورین کی گولیوں کا استعمال کیا جائے۔ پینے او ر وضو کرنے کیلئے پانی کو سو ڈگری پر اچھی طرح ابالنے سے گلیریا کے جرثومے کا خاتمہ ممکن ہے۔ماہرین کہتے ہیں شہر یوں کو نگلیریا سے بچانے کیلئے واٹر بورڈ پانی میں کلورین کی مطلو بہ مقدار کو پورا کرے، اس کے علاوہ سوئمنگ پول میں تیراکی کے دوران احتیاطی طور پر ناک کو پانی سے اوپر رکھا جائے ۔

Open chat